حیدر آبادی چوڑیوں کا پاکستان میں کوئی ثانی نہیں

حیدر آبادی چوڑیوں کا پاکستان میں کوئی ثانی نہیں


حیدر آباد( 24نیوز) عید ہو یا کوئی اور خوشی کا موقع خواتین کے ہاتھوں میں چوڑیاں نہ ہوں تو ان کی تیاری نامکمل رہ جاتی ہے، حیدر آباد میں تیار کی جانے والی کانچ کی چوڑیوں کا کوئی ثانی نہیں، رمضان المبارک میں عید کیلئے چوڑیوں کے کام میں تیزی آجاتی ہے۔
کانچ کی چوڑیوں کی تیاری میں حیدرآباد کو ایک خاص اہمیت حاصل ہے، مختلف مراحل اور تقریبا سو افراد کے ہاتھوں سے گزرنے کے بعد یہ چوڑی تیار ہوتی ہے، حیدر آباد کی چوڑی کا کم از کم پاکستان میں کوئی ثانی نہیں۔
کانچ کو بھٹی میں پگھلانے کے بعد پہلے چوڑی کی کٹائی کی جاتی ہے، پھر سدائی، جوڑائی اور فنشنگ کے بعد چوڑیاں مارکیٹ میں فروخت کیلئے تیار ہوتی ہیں، ماہ رمضان میں چوڑیاں تیار کرنے والے کارخانوں کے کاریگر دن رات چوڑیاں تیار کرنے میں لگے رہتے ہیں، کاریگروں کی بھی اپنی ہی کہانی ہے۔
حیدر آباد میں چوڑی سازی کی صنعت سے چار لاکھ سے زائد افراد کا روزگار وابستہ ہے ،لیکن کم اجرت ملنے پر اس کام سے وابستہ کاریگر مایوسی کا شکار ہیں۔

وقار نیازی

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔