ہری پور، یتیم خانہ میں بنیادی سہولتوں کا فقدان

ہری پور، یتیم خانہ میں بنیادی سہولتوں کا فقدان


ہری پور (24نیوز) ہری پور میں قائم یتیم خانہ بھوت بنگلا بن گیا۔ بلڈنگ ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہوگئی ۔چھت گرنے کا خدشہ بڑھ گیا۔ زیرکفالت 25 بچے ایک کمرے میں زندگی گزارنے پرمجبور ہیں۔ یتیم خانہ تباہی کے دہانے پرپہنچ گیا۔  چھت منہدم ہونے کاخطرہ بڑھ گیا۔

 ہری پورمیں 1932 سے قائم قدیمی یتیم خانہ جو متعلقہ حکام کی لاپرواہی اور غفلت سے واقعہ ہی "یتیم" نظر آرہا ہے۔بلڈنگ جگہ جگہ سے ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہے۔ گندگی ، جگہ جگہ مکڑی کے جالے اور گندے کپڑوں کے ڈھیر بھی نظر آتے ہیں۔یتیم خانے کے اندر کے حالات دیکھے جائیں تو رونا آتا ہے۔ ایک کمرے میں 25بچے رہتے ہیں۔پانی ،بجلی ،باتھ روم کا انتظام انتہائی ناقص ہے۔کچن،لیٹرینوں، رہائشی کمروں کی حالت زار بخوبی دیکھی جا سکتی ہے۔  چھت وقت منہدم ہونے کاخطرہ ہے۔

لوگوں کے عطیات اور صدقات سے بل اور اساتذہ کا اعزایہ تک پورا نہیں ہوتا ۔راشن بھی مشکل سے پورا ہوتا ہے۔ بچوں کو سال میں ایک بار کپڑے دئیے جاتے ہیں۔ بچوں کی حجامت کا کوئی انتظام موجود نہیں۔

انتظامیہ نے خامیاں چھپانے کیلئے لوگوں اورصحافیوں کا داخلہ بند کررکھا ہے۔چیئر پرسن سوشل ویلفیئر ڈیپارٹمنٹ ایم پی اے مومنہ باسط نے یتیم خانے کا دورہ کیا ۔ ابترصورتحال پر انچارج لہراسب خان پر اظہار برہمی کیا۔ انہوں نے صورتحال بہتر بنانے اور تمام فنڈز کا آڈٹ کروانے کا حکم بھی دیا۔

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔