شوبز انڈسٹری میں مردوں نے نہیں، خواتین نے جنسی ہراساں کیا: رابی پیرزادہ

شوبز انڈسٹری میں مردوں نے نہیں، خواتین نے جنسی ہراساں کیا: رابی پیرزادہ


لاہور(ویب ڈیسک)اداکارہ میشا شفیع اور اداکارہ علی ظفر کا معاملہ تھما نہیں تھا کہ ایک اور جنسی ہراسگی کا شکار خاتون میدان میں آگئیں،انہوں نے کسی مرد پر الزام عائد نہیں کیا ہے بلکہ ان کو عورتوں سے خطرہ ہے ۔
نام جاننے سے پہلے ذرہ یہ جان لیں کہ خواتین کی مردوں اور مردوں سے خواتین کی جنسی ہراسگی صرف پاکستان میں ہی نہیںدنیا بھر میں بہت بڑا مسئلہ ہے،شوبز یا میڈیا انڈسٹری میںاس لیے زیادہ لگتا ہے کیونکہ مشہور ہونے کی وجہ سے ان کی خبر بن جاتی ہے لیکن یہ سب گھر وںمیں کام کرنیوالی خواتین جن کو ماسیاں کہا جاتا ہے ان کے ساتھ بھی ہوتا ہے دفاتر میں مردوں کے ساتھ خواتین کے ساتھ بھی ہوتا ہے۔

ضرور پڑھیں: بھائی نے میری بیٹیوں کے ساتھ۔۔گلوکارہ نازیہ اقبال نے بھیانک انکشاف کردیا 
ہالی ووڈ اور بالی ووڈ میں تو یہ عام ہے،ہدایت کار ہاروی وائن سٹائن پر کئی خواتین اداکاﺅں نے جنسی ہراسگی کا الزام لگایا،جن میں گوینتھ پالٹرو، اینجلینا جولی ، کارا ڈیولین، لیا سیڈاکس، روزانا آرکویٹا اور میرا سوروینو جیسی کئی شامل ہیں، یو ایس اے ٹوڈے کے ایک سروے کے مطابق فلم انڈسٹری میں 94 فیصد خواتین جنسی ہراسانی کا شکار ہوتی ہیں۔امریکا میں فزیوتھراپسٹ کے ایک سروے سے انکشاف ہوا کہ 80 فیصد معالجین کو ان کے مریض کسی نہ کسی طرح جنسی طور پر ہراساں کرتے ہیں۔،اس سروے میں تھراپسٹ نے پیش آنے والے اپنے واقعات بھی بیان کیے ہیں اور کل 900 کے قریب فزیوتھراپسٹ نے اپنی رائے دی ہے۔ فزیو تھراپسٹ نے کہا کہ ان کے مریض نازیبا جملے، غیر ضروری طور پر چھونے، خود کو ظاہر کرنے اور جنسی حملے تک کے مرتکب ہوئے ہیں اور یہ واقعات گزشتہ سال پیش آئے ہیں۔
جی اب جس خاتون نے یہ انکشاف کیا ہے یہ کوئی عام خاتون نہیں بلکہ گلوکارہ رابی پیرزادہ ہیں جن کی ایک ایک ادا پر سینکڑوں نوجوان دل تھام کر رہ جاتے ہیں۔گلوکارہ نے مہم 'می ٹو' کے حوالے سے بات کرتے ہوئے دعویٰ کیا ہے کہ انہیں شوبز میں مردوں نے نہیں بلکہ خواتین نے ہراساں کیا،حال ہی میں میڈیا سے گفتگو میں رابی پیرزادہ نے میشا شفیع اور علی ظفر کے تنازع پر اظہار خیال کیا اور اس ویڈیو کو اپنے انسٹاگرام اکاونٹ پر شیئر کیا۔
ویڈیو میں رابی پیرزادہ نے علی ظفر کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ 'یہ سب پبلسٹی اسٹنٹ ہے ایسے کوئی خاتون ہراساں نہیں ہوجاتی، شوبز میں گھریلو جھگڑوں سے لے کر طلاق یا میل ملاپ کے جو بھی معاملات سامنے آتے ہیں، سب پبلک کے لیے ہوتے ہیں۔
ان کا کہنا تھا کہ 'میں بھی طویل عرصے سے شوبز انڈسٹری میں ہوں، اگر آپ عزت دیں گے تو آپ کو عزت ملتی ہے، ہماری شوبز کی خواتین می ٹو مہم کا غلط استعمال کر رہی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: فضاءعلی نے شوبز انڈسٹری کو چھوڑ دیا
رابی پیرزادہ نے بتایا کہ لوگ ان پر تنقید کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ ’آپ اور (اداکارہ) میرا پبلسٹی اسٹنٹ کرتے ہیں، جس پر میں کہتی ہوں کہ مجھے کیا ملے گا یہ سب کرکے، میں یہ کیوں کروں گی،خواتین کے لیے مردوں پر ہراساں کرنے کا الزام لگانا بہت آسان ہوگیا ہے، مجھے ایسا کرنا ہو تو میں بھی کسی پر لگادوں لیکن ایسا کرنا بالکل درست نہیں ہے'۔
رابی پیرزادہ نے مزید بتایا کہ انہوں نے جب شوبز انڈسٹری میں قدم رکھا تو انہیں مردوں نے بہت عزت دی لیکن خواتین نے ہراساں کرنے کی بہت کوشش کی تھی، لیکن انہوں نے ان کوششوں کو نظرانداز کرکے فاصلہ برقرار رکھا تھا۔