ڈیجیٹل تقسیم کیا ہے؟ یونیسیف کی تازہ رپورٹ سامنے آگئی

ڈیجیٹل تقسیم کیا ہے؟ یونیسیف کی تازہ رپورٹ سامنے آگئی


 نیویارک(24نیوز)دنیا میں ڈیجیٹل تقسیم بھی سامنے آگئی، ڈیجیٹل تقسیم کی وجہ سے پسماندہ ممالک میں محرومیاں فروغ پانے لگیں،آگے بڑھنے کے مواقع ترقی یافتہ ممالک تک محدود ہوکر رہ گئے۔

تفصیلات کے مطابق انٹرنیٹ کے استعمال نے پوری دنیا کو ایک چھوٹا ساگاؤں بنادیا ہے۔ مگرانٹرنیٹ نہ ہونے یا اس کا استعمال نہ کیے جانے کی وجہ سے اب بھی دنیا کی بڑی آبادی اس ڈیجیٹل گاؤں سے باہرہے۔

یونیسیف کی تازہ رپورٹ کے مطابق ترقی یافتہ ممالک کے 81فیصدافراد انٹرنیٹ سے منسلک ہیں۔ اس کے برعکس کم ترقی یافتہ ممالک کے صرف 15فیصد لوگوں کی ہی انٹرنیٹ تک رسائی ہے۔ دنیا میں 15سے 24سال تک کی 29فیصد آبادی ایسی ہے جو اب بھی انٹرنیٹ سے دورہے۔اس کے برعکس دنیا میں 15سال سے کم عمربچوں میں سے صرف 30فیصد ہی انٹرنیٹ استعمال کرتے ہیں جبکہ پاکستان میں صرف 17فیصد لوگ انٹرنیٹ منسلک ہیں۔

رپورٹ میں مزید یہ بات واضح کی گئی ہے کہ 15سال سے کم عمربچے جن کی انٹرنیٹ تک رسائی نہیں وہ آگے چل کرزندگی کی دوڑمیں پیچھے رہ جاتے ہیں یہ بچے نہ تومناسب مواقع پاتے ہیں اورنہ ہی نئے دوست بناپاتے ہیں حتیٰ کہ اپنی ذات کے اظہارپربھی پوری طرح قادرنہیں ہوپاتے۔

یونیسیف کی رپورٹ سے یہ بات بھی منظر عام پر آئی کہ انٹرنیٹ تک رسائی کی نگرانی مشکل ہوجانے کےبعد بچے کئی مسائل سے بھی دوچارہیں۔ نگرانی نہ ہونے سے بچے آن لائن جنسی استحصال کا شکاربھی ہورہے ہیں۔ نامناسب مواد تک بچوں کی رسائی بھی کئی معاشرتی مسائل کوجنم دے رہی ہے۔