علی رضا عابدی کے قتل کی تحقیقات میں اہم پیشرفت

علی رضا عابدی کے قتل کی تحقیقات میں اہم پیشرفت


کراچی(24نیوز)سابق رکن قومی اسمبلی اور ایم کیو ایم رہنما علی رضاعابدی کراچی میں قاتلانہ حملے میں جاں بحق ہوگئے، وزیراعظم عمران خان اوروزیراعلیٰ سندھ  مراد علی شاہ نے واقعہ کی رپورٹ طلب کرلی جبکہ تحقیقات کادائرہ وسیع کردیا گیا.

 تفصیلات کے مطابق ایم کیوایم پاکستان کےسابق رکن قومی اسمبلی علی رضاعابدی کوگزشتہ رات ان کے گھرکے دروازے پرگاڑی پرفائرنگ کرکے نشانہ بنایاگیا ،گاڑی میں موجودان کے والد بھی شدیدزخمی ہوئے،والد نے اسی گاڑی میں علی رضاعابدی  کوقریبی ہسپتال الشفاء منتقل کیاگیا تاہم وہ جانبرنہ ہوسکے، ایم کیوایم پاکستان کےرہنماعامرخان،فیصل سبزواری ، میئروسیم اختر سمیت دیگرسیاسی رہنماء بھی ہسپتال پہنچے ، پولیس حکام بھی جائے وقوعہ کامعائنہ کیا،وزیراعظم عمران خان  اوروزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نےواقعہ کی اعلیٰ سطحی رپورٹ طلب کرلی ہے۔

دوسری جانب علی رضا عابدی کےقتل میں استعمال ہونے والی گولیوں کا فرانزک ٹیسٹ مکمل کرلیا گیا،پولیس کا کہنا تھا کہ واقعہ میں استعمال ہونے والا 30 بور کا پستول لیاقت آباد میں قتل کی ایک اور واردات میں بھی استعمال ہوا، ذرائع کا کہنا تھا کہ احتشام نامی نوجوان کے قتل میں بھی یہی اسلحہ استعمال کیا گیا،پولیس نے علی رضا عابدی قتل کیس میں اب تک سات افراد کے بیانات ریکارڈ کرلیے ہیں، تفتیشی حکام کا کہنا ہے کہ علی رضا عابدی پر سات گولیاں فائر ہوئیں جن میں سے تین گولیاں گاڑی پر لگیں۔

اب تک واقعہ کے دو ملزمان سامنے آئے ہیں جن کے بیک اپ پر بھی بعض افراد ہوسکتے ہیں، علی رضا عابدی فشریز میں میں واقع اخلاق انٹرپرائز سے گھر روانہ ہوئے تھے،، جہاں دروازے پر ہی انہیں نشانہ بنایا گیا، پولیس نے گھر پر تعینات گارڈ کو بھی حراست میں لے لیا ہے، ایس ایس پی پیر محمد شاہ کے مطابق گارڈ عبدالقدیر سے اس بات پر تحقیقات کی جا رہی ہے کہ اس نے حملہ آور پر جوابی فائرنگ کیوں نہ کی۔

 ادھر پولیس نے علی رضا عابدی قتل کیس میں جیل میں موجود ایم کیو ایم لندن اور کالعدم تنظیموں کے سرگرم کارکنان سے تفتیش کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے، ذرائع کا کہنا تھا کہ تحقیقات ان پہلووں پر بھی کی جارہی ہیں کہ علی رضا عابدی کے قتل میں ذاتی دشمنی یا سیاسی مخاصمت تو نہیں جبکہ  سی سی ٹی وی فوٹیج کے ذریعے ملزمان کی شناخت کا عمل جاری ہے۔ 

پولیس حکام کے مطابق ٹارگٹ کلرز نے 10 سیکنڈ کے اندر حملہ مکمل کیا،علی رضاعابدی کو دو گولیاں سینے، ایک کندھے اور ایک گردن میں لگی،تحقیقاتی اداروں نے جائے وقوعہ سےشواہداکٹھے کرکے ابتدائی رپورٹ تیارکرکے اعلیٰ حکام کے حوالے کردی ہے ۔ 

علی رضا عابدی پر حملہ آوروں نے پینٹ شرٹ اور جیکٹ پہن رکھی تھی ،واقعے کی سی سی ٹی وی بھی حاصل کرکے تحقیقات کادائرہ وسیع کردیاہے۔