پاکستانی حدود میں حملے کا دعویٰ،بھارتی صحافیوں نے سوالات اٹھادیے

پاکستانی حدود میں حملے کا دعویٰ،بھارتی صحافیوں نے سوالات اٹھادیے


دہلی(24نیوز)بھارت کی جانب سے پاکستان میں دراندازی کے بلند و بانگ دعوے کیے جا رہے ہیں  مگر بے زبان درختوں پر حملہ کرنے والے بھارت کی ان گیدڑ بھبھکیوں پر کچھ صحافی سوالیہ نشان لگا رہے ہیں۔

بھارت کو جھوٹی سرجیکل سٹرائیکس کے دعوے کی عادت ہے یہی وجہ ہے کہ اس کی بات پر کوئی یقین نہیں کرتا ،دوسروں کو تو چھوڑیں اپنے صحافی بھی اس پر یقین نہیں کرتے،بی بی سی کے سئنیربھارتی صحافی ماجومدر نے بی بی سی کے ایک اور صحافی سکھوندر کرمانی کی ٹوئٹ شئیر کی ہے جس میں برطانوی نشریاتی ادارے کے پاک افغان امور پر نظر رکھنے والے صحافی نے بھارتی دعوے پر سوالیہ نشان لگایا ہے۔

بی بی سی کے صحافی کا کہنا ہے کہ بھارت کی طرف سے پاکستان کے اندر جس دراندازی کا دعویٰ کیا جا رہا ہے وہ غلط ہے اور کہا ہے کہ لگتا نہیں کہ بھارت جس کارروائی کا دعویٰ کر رہا ہے ایسا سچ ہو ،بھارت نے چار پانچ کلومیٹر کے جس علاقے میں دراندازی کی وہاں تباہ کیا تو کیا ؟؟ کچھ درخت ،اور پھر سر پر پاوں رکھ کر دوڑ لگا دی ۔

سارا دن بھارتی میڈیا جو فوٹیج دکھاتا پایا گیا ،اس کا بھی گزشتہ شب کے واقعہ سے کچھ لینا دینا نہیں ، انٹر نیٹ اور سوشل میڈیا کے اس دور میں جھوٹ زیادہ دیر نہیں چلتا ،بھارتی چینلز پر چلائی جانے والی فوٹیج کچھ گھنٹوں بعد ہی جھوٹی ثابت ہو گئی۔

اظہر تھراج

Senior Content Writer