کراچی والوں کیلئے مردے مسئلہ بن گئے


کراچی( 24نیوز )کراچی میں لانڈھی میڈیکل کمپلکس میں قائم کے ایم سی کا مردہ خانہ انتظامی مسائل کے بعد غیر فعال ہوگیا، اطراف میں رہنے والے شہریوں کو مشکلات کا سامنا ہے۔
کراچی کے علاقے لانڈھی میں میڈیکل کمپلیکس کا مردہ خانہ کے ایم سی کی غفلت سے غیر فعال ہوگیا،بتایا جاتا ہے کروڑوں روپے کی لاگت سے 2009 میں سابق ناظم کراچی مصطفیٰ کمال نے مورچری کا افتتاح کیا تھا، مردہ خانوں میں 58 میتوں کو محفوظ بنایا جاسکتا تھا تاہم اب انتظامیہ کے پاس ڈیزل ہے نہ مردہ خانہ چلانے والے ماہر ملازمین۔مردہ خانہ خود ہی مردہ پڑا ہے۔
لانڈھی میں بسنے والوں میں سے کسی کا انتقال ہوجائے تو میت کو مورچری میں رکھنے کے لئے جناح ہسپتال یا ایدھی سرد خانے لے جانا پڑتا ہے، جس سے علاقہ مکین شدید ذہنی اذیت سے دوچار ہوتے ہیں۔

بھارتی فوج کی درندگی انتہا کو پہنچ گئی،پانچ کشمیر یوں کو گرفتار کرکے گولیاں ماردیں
2015 کے ہیٹ اسٹروک اور پھر سینکڑوں اموات ہوئیں، شہریوں کو اب بھی سانحے کے طور پر یاد ہیں، جہاں میتیں زیادہ اور مردہ خانے کم پڑ گئے تھے،،ایسے میں لانڈھی کے کولڈ اسٹوریج کا ٹھپ ہوجانا کے ایم سی کی نا اہلی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔

اظہر تھراج

صحافی اور کالم نگار ہیں،مختلف اخبارات ،ٹی وی چینلز میں کام کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں