قتل کیس میں 2 بھائیوں کی پھانسی عین وقت پر ٹل گئی

قتل کیس میں 2 بھائیوں کی پھانسی عین وقت پر ٹل گئی


اسلام آباد ( 24نیوز ) قتل کیس میں 2 بھائیوں کی پھانسی عین وقت پر ٹل گئی،دونوں بھائیوں کو آج صبح ڈسٹرکٹ جیل میں تختہ دار پر لٹکایا جانا تھا،دونوں کو ایک بار پھر زندگی مل گئی ہے۔

گزشتہ روز سپریم کورٹ نے علاوہ ازیں سپریم کورٹ نے نظر ثانی اپیل کی سماعت کرتے ہوئے معمولی تنازعہ پر شہری کے قتل کے الزام میں سزائے موت پانے والے دو بھائیوں کی پھانسی پر عمل درآمد روکنے کا حکم جاری کیا تھا، دونوں بھائیوں کوآج سنٹرل جیل جہلم میں پھانسی دی جانی تھی۔

عدالت کا حکم فوری ٹیلی فون کے ذریعے سپرنٹنڈنٹ جیل کو پہنچانے کا حکم دے دیا۔ دوران سماعت ملزمان کے وکیل نے دلائل میں موقف اختیار کیا کہ ملزمان کو کم عمر ہونے کا فائدہ دیا جانا چاہیے تھا۔ نظرثانی درخواست ملزم سکندر حیات اور جمشید علی نے دائر کی تھی۔

یا د رہے سپریم کورٹ نے ملٹری کورٹ کے دہشتگردی کے چار ملزموں کی سزائے موت پر عملدرآمد روک دیا تھا۔ملزمان پر سوات میں سکیورٹی فورسز پر حملوں کا الزام ہے۔ کیس کی سماعت جسٹس عظمت سعید کی سر براہی میں تین رکنی بنچ نے کی۔ عدالت نے وزارت دفاع اور داخلہ کو نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیا۔ فوجی عدالتوں نے ملزمان کو سزائے موت سنائی تھی، ملزمان ملزم عمر سید، نثار علی، فضل علی اور فضل الرحمان نے سزاﺅں کے خلاف اپیلیں دائر کی تھیں۔