کشمیریوں پر ظلم کی انتہا، بھارتی اخبار بھی چیخ اُٹھا

کشمیریوں پر ظلم کی انتہا، بھارتی اخبار بھی چیخ اُٹھا


نئی دہلی( 24نیوز )مقبوضہ وادی میں بھارتی فوج کے بدترین مظالم پر بھارتی اخبار ہندوبھی خاموش نہ رہا،وادی کی صورتحال خوفناک قراردیدی جبکہ برطانوی اخبار انڈی پینڈینٹ نے مقبوضہ وادی کودنیا کا سب سے بڑا ملٹری زون قرار دیدیا۔

تفصیلات کے مطابق مقبوضہ وادی میں بھارتی فوج کے ظلم کی انتہاوں پر بھارتی اخبار ہندوبھی میدان میں آگیا، دی ہندو نے اپنے اداریے میں لکھا کہ یہ تصور کرنا کہ ا یک کھلا معاشرہ، ایک آزاد میڈیا کسی بھی طرح قومی سالمیت اور سلامتی کے لیے خطرہ ہے، آمریت کی توجیہہ سے کم نہیں،ایڈیٹوریل میں اس بات کی نشاندہی کی گئی کہ بھارت کو صحافت میں تشویشناک حد تک معیار میں کمی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

مزید بیان کیا گیا کہ پی سی آئی کی قانونی اور اخلاقی ذمہ داری کبھی اتنی اہم نہیں تھی جتنی آج ہے،چنانچہ پریس کونسل آف انڈیا کو حکومت وقت کے آگے سر تسلیم خم کرنے کے بجائے اپنا کردار نبھانا چاہیے۔

دوسری جانب برطانوی اخبار انڈی پینڈینٹ نے تہلکہ خیز انکشاف کیا کہ مقبوضہ کشمیر میں خون کی ندیاں بہائی جا رہی ہیں اور اب کشمیریوں کا کہنا ہے کہ 5 اگست سے جاری اس نسل کشی میں شہید ہونے والے کشمیریوں کے ڈیتھ سرٹیفیکیٹ جاری کرنے سے انکار کر دیا ہے ،دوسری طرف بھارتی فوج اور حکومت بہت ڈھٹائی سے کہتی پھر رہی ہے کہ کشمیر میں 5 اگست کے بعد ایک ہلاکت بھی نہیں ہوئی۔

اخبارمیں یہ بھی بیان کیا گیا کہ مقبوضہ وادی دنیا کا سب سے بڑا ملٹری زون بن چکی ہے، 5 اگست سے ابتک کشمیر میں لاتعداد انسانوں کا قتل عام کیا جا چکا ہے،اس دوران شہید ہونے والے کشمیریوں میں نوجوان ہی نہیں بچے ، بزرگ اور خواتین بھی شامل ہیں لیکن مکمل میڈیا شٹ ڈاؤن کی وجہ سے مقبوضہ کشمیر میں کھیلی جانے والی خون کی ہولی کے اعداد و شمار منظر عام پر نہیں آ رہے۔

اخباردی انڈی پینڈینٹ  نےسوال اٹھایا ہے کہ اگر کشمیر میں کوئی ہلاکت نہیں ہوئی تو شہریوں کے ڈیتھ سرٹیفیکیٹ جاری کرنا کیوں بند کر دیئے گئے ہیں؟