نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیو ویسکولر ڈیزیز دکھی عوام کیلئے مسیحا


کراچی (24 نیوز ) کراچی میں قائم نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیو ویسکولر ڈیزیز دکھی عوام کیلئے مسیحا بن گیا۔ ادویات،ٹیسٹ اور آپریشنز کے تمام اخراجات سندھ حکومت نےاپنے ذمے لے لئے۔ مئی 2017 سے پانچ چیسٹ یونٹوں نے بھی کام شروع کردیا۔

 تفصیلات کے مطابق شعبہ صحت کی صوبائی سطح تک منتقلی عوام کیلئے نوید کی کرن ثابت ہوئی اور نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیو ویسکولرڈیزیز کو اٹھارہویں ترمیم کے بعد سندھ حکومت کومنتقل کیا گیا۔ سالانہ لاکھوں مریض سندھ حکومت کی عوام دوست پالیسوں کے باعث مستفید ہو رہے ہیں۔ سندھ حکومت این آئی سی وی ڈی کے سٹلائٹ سنٹر منصوبے پر بھی کام جاری کر دیا ہے۔  جبکہ لاڑکانہ ،ٹنڈومحمد خان اور حیدرآبادمیں سٹلائٹ سنٹروں نے کام شروع کردیا گیا ہے۔

واضح رہے، کہ 1963سے کراچی میں قائم نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیو ویسکولر ڈیزیز کو اٹھارہویں ترمیم کے بعد سندھ حکومت کے دائرہ اختیار میں دیا گیا تھا۔ کراچی سمیت پورے ملک سے عوام اس ادارے سے مستفید ہوتے ہیں،جہاں ہرسال چار لاکھ آوٹ ڈور اور دو لاکھ ایمرجنسی سمیت 6 لاکھ مریضوں کا علاج کیا جا رہا ہے۔ اس کے ساتھ ہی  کراچی میں مئی 2017 سے پانچ چیسٹ یونٹ کام کر رہے ہیں۔