جنوبی پنجاب معصوم بچیوں کی عصمتوں کی جناز گاہ بن گیا


24 نیوز: پنجاب میں بچیوں کے ساتھ زیادتی کے واقعات بڑھتے جا رہے ہیں۔ ایک ہفتہ کے دوران پنجاب میں زیادتی کے 5 واقعات سامنے آ گئے جن میں سے 4 واقعات جنوبی پنجاب میں پیش آئے۔

ذرائع کے مطابق درندوں کی ہوس بڑھتی جا رہی ہے۔ بچیوں کی عصمتیں لٹتی جا رہی ہیں۔ لیکن حکومت پنجاب کو ہوش نہیں آرہا۔ صرف ایک ہفتہ کے دوران پنجاب میں بچیوں سے زیادتی کے 5 واقعات سامنے آئے ہیں، جن میں سے 4 جنوبی پنجاب سے ہیں۔

یہ بھی پڑھئے: لیڈیز چینجنگ روم میں خفیہ طور پر مرد کی موجودگی کا انکشاف 

لودھراں میں ننھی عاصمہ کو اسی کے چچا زاد نے زیادتی کے بعد قتل کردیا۔ عاصمہ کے قاتل علی حیدر نے عدالت کے روبرو اپنی سفاکیت کا اعتراف بھی کرلیا۔

بہاولنگر میں ناہید کو زیادتی کو نشانہ بنا ڈالا گیا۔ ناہید تو بے چاری گونگی اور بہری بھی تھی۔ پولیس نے جنسی درندے کو گرفتار کر لیا۔

شجاع آباد میں تیسری جماعت کی طالبہ سویرا اسکول سے واپس آ رہی تھی کہ راستہ میں دانش نامی شخص نے اسے زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا۔ ملزم تاحال پولیس کی گرفت میں نہیں آ سکا۔

متعلقہ خبر: پسند کی شادی، اہلخانہ کا لڑکے، لڑکی پر بدترین تشدد
 
اوچ شریف میں ایک اور گونگی بہری بچی عائشہ درندگی کی بھینٹ چڑھ گئی۔ ملزم نے ننھی عائشہ کو گھر میں اکیلا پا کر زیادتی کر ڈالی۔ پولیس نے مقدمہ درج کر لیا۔

کامونکی میں آٹھ سالہ بچی کو اسی کے ایک رشتہ دار نے قبرستان میں لے جا کر ہوس کا نشانہ بنا ڈالا۔ پولیس نے ملزم کو گرفتار کر لیا۔

ویڈیو دیکھئے: