پشاور: حلقہ66 ترقی کے لحاظ سے پسماندگی کا شکار

پشاور: حلقہ66 ترقی کے لحاظ سے پسماندگی کا شکار


پشاور ( 24نیوز )  قومی اسمبلی کے 27اورصوبائی اسمبلی کےحلقہ 66 ترقی کےلحاظ سے بہت پسماندہ ہیں۔ منتخب نمائندوں نے علاقہ کے مسائل پر توجہ نہ دے کرعوام کی امیدوں پرپانی پھیردیا ہے۔2018 انتخابات قریب آتے ہی امیدواروں کو یہاں کےباسیوں کی یاد پھر ستانےلگی ہے۔

ماضی میں حکمرانوں نےتبدیلی، انقلاب اورنظام میں بہتری لانے کے نام پر عوام کے ووٹوں سے خود کو منتخب کروایا مگر کسی نے بھی عوامی مسائل پرتوجہ نہیں دی۔ یہی وجہ ہے کہ یہ علاقے ترقی کے لحاظ سے بہت پیچھے رہ گئے ہیں۔ پشاور کے حلقہ این اے 27 اور پی کے 66 کے بیشتر افراد آج بھی کچی آبادیوں میں مقیم ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:شہریوں کے شناختی کارڈز بلاک، بڑی تعداد ووٹ کاسٹ کرنے سے محروم

علاقہ مکینوں کا کہنا ہے کہ علاقے میں تعلیم، زراعت، صحت، پانی اور روزگار جیسے مسائل حل کرنے کے نام پر ہمیشہ عوام کو دھوکہ دیا گیا۔ ماضی کے حکمرانوں سے عوام مایوس دکھائی دے رہے ہیں۔ مگر اب دیکھنا یہ ہے کہ آئندہ انتخابات میں عوام کس جماعت یا امیدوار پر اعتماد کرکے کامیاب کراتے ہیں۔