سعودی صحافی کےقتل کامعاملہ سنگین شدت احتیار کر گیا

سعودی صحافی کےقتل کامعاملہ سنگین شدت احتیار کر گیا


انقرہ(24نیوز) صحافی جمال خاشقجی کےقتل کا معاملہ سنگین صورت حال احتیار کر گیا،  ترک وزارت انصاف نےسعودی عرب سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ  سعودی صحافی کےقتل میں ملوث اٹھارہ مشتبہ افراد کو انقرہ کے حوالے کرے۔

تفصیلات کے مطابق سعودی صحافی کے قتل کامعاملہ شدت احتیار کر گیا ، ترک حکام نے سعودی عرب سے اہم مطالبہ کیا کہ وہ سعودی صحافی خاشقجی کے مشتبہ قاتلوں کو ملک بدر کرتے ہوئے انقرہ کے حوالے کرے، ترکی کے صدر کا کہنا تھا کہ اس قتل سے متعلق ایسے اور بھی شواہد موجود ہیں جو ابھی تک منظر عام پر نہیں آئے،مقتول صحافی اور واشنگٹن پوسٹ کے کالم نگار جمال خاشقجی کے استنبول میں قتل کے بارے میں اب تک جتنی بھی تحقیقات کی گئیں ہیں اس کے بعد ترک کی حکومت کی خواہش ہے کہ قتل کا مقدمہ ترکی ہی کی عدالت میں چلایا جائے گا۔

ترک حکام کا مزید کہنا تھا کہ اس حوالے سے  سعووی عرب کی جیل میں گرفتار اٹھارہ افراد کو ملک بد ر کر کے ترکی  کے حوالے کیا جائے ،اس سلسلے میں سعودی حکومت نے ابھی تک کو ئی حامی نہیں بھری۔

واضح رہے کہ ترکی میں سعودی عرب کے قونصل خانے سے لاپتہ سعودی صحافی کی موت کی تصدیق کی گئی تھی، سعودی عرب کا کہنا تھا کہ استنبول کے قونصل خانے میں صحافی جمال خاشقجی اور وہاں موجود افراد میں جھگڑا ہوا جس کے باعث ان کی موت واقع ہوئی، جبکہ سعودی سرکاری ٹی وی  نے بھی اس بات کی تصدیق کی کہ قونصل خانے میں جھگڑے کے دوران موت واقع ہوئی، قتل کے الزام میں 18 افراد گرفتار کیا گیا،اس کے علاوہ دو سعودی مشیروں سمیت پانچ اعلیٰ عہدیدار برطرف  بھی کیا گیا تھا۔