انڈیا میں ’ایڈلٹری‘ جرم کے دائرے سے خارج

انڈیا میں ’ایڈلٹری‘ جرم کے دائرے سے خارج


نئی دہلی(24 نیوز) انڈیا کی سپریم کورٹ نے ملک میں شادی شدہ افراد کے اپنے ساتھی کے علاوہ کسی دوسرے فرد سے جنسی تعلق رکھنے کے عمل کو جرم کے دائرے سے خارج کر دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق عدالت عظمیٰ کے پانچ رکنی بنچ نے جمعرات کو اپنے فیصلے میں کہا ہے کہ دستور ہند کی 158 سال قدیم دفعہ 497، جس کے تحت کسی شادی شدہ عورت کے ساتھ اس کے شوہر کی مرضی کے بغیر کسی مرد کے جنسی تعلقات کو جرم مانا جاتا تھا، آئین کے منافی ہے۔ بھارت میں اب دو بالغوں کے درمیان جنسی تعلق، بشرطیکہ اس میں دونوں کی مرضی شامل ہو، جرم نہیں مانا جائے گا چاہے وہ دونوں شادی شدہ ہی کیوں نہ ہوں لیکن پہلے کی طرح طلاق حاصل کرنے کے لیے ایڈلٹری کو بنیاد بنایا جا سکے گا۔

سپریم کورٹ کے پانچ رکن بینچ نے اپنے فیصلے میں کہا کہ عورت کو مرد کی ملکیت نہیں مانا جاسکتا اور آج کے دور میں اس طرح کے فرسودہ قانون کے لیے کوئی جگہ نہیں ہے۔چیف جسٹس دیپک مشرا کی سربراہی میں پانچ رکنی بنچ نے کہا کہ یہ قانون دستور کے آرٹیکل 14 اور 21 کے منافی ہے جو زندگی، آزادی اور مساوات کے حق کی ضمانت دیتے ہیں۔