سرکاری سکولوں میں بچوں کا مستقبل کوخطرہ لاحق

سرکاری سکولوں میں بچوں کا مستقبل کوخطرہ لاحق


لاہور(24نیوز)  پین این جی او کے تحت دیئےگئے شہر کے 31 سرکاری سکولوں میں اساتذہ کی قلت پیدا ہوگئی،80 سے زائد بچوں کیلئے صرف 1 ٹیچر، آل ٹیچرزایسوسی ایشن کے صدر اسحاق کمیانہ کہتے ہیں پین کی تنخواہیں کم ہونے کی وجہ سے اساتذہ نوکری چھوڑ دیتے ہیں،حکومت سکول این جی اوز کے حوالے کرنے سے پہلے مکمل جانچ پڑتال کرے۔

 تفصیلات کے مطابق حکومت کی جانب سے پین این جی او کو دیئے گئے شہر کے 31 سرکاری سکولوں کا  مستقبل   خطرے میں پڑ گیا۔ پین تحت دیئے گئے سکولوں میں اساتذہ کی قلت پیدا ہوگئی۔80 سے زائد بچوں کو صرف 1 ٹیچر پڑھا رہا ہے ۔

یہ بھی پڑھیں:دہشت کے ماحول میں بچوں کو پڑھانے والی صحرائی علاقے کی باہمت استانی

آل ٹیچرز ایسوسی ایشن پنجاب کے صدر اسحاق کمیانہ کا کہنا تھا کہ گورنمنٹ گرلز ہائی سکول گوپال نگر میں پین کی جانب سے صرف ایک ٹیچر تعینات ہے۔پین اپنے ٹیچرز کو صرف 6 ہزار روپے ماہانہ دیتا ہے۔ تنخواہیں کم ہونے کی وجہ سے ہر مہینے اساتذہ سکول چھوڑ جاتےہیں۔

پڑھنا نہ بھولیں:کراچی میں بوٹی مافیا بے لگام
 
 اسحاق کمیانہ نے مطالبہ کیا کہ پین انتظامیہ مستقل اساتذہ تعینات کرے۔انہوں نے حکومت سے اپیل کی ہے کہ سکول این جی اوز کے حوالے کرنے سے پہلے مکمل جانچ پڑتال کرے۔ دوسری جانب پین این جی او کی ایچ آر مینجر ثروت کا کہنا تھا کہ اساتذہ کو اب اچھی مراعات پر رکھا جارہا ہے۔
 

شازیہ بشیر

   Shazia Bashir   Edito