انتظامیہ کی عدم توجہ سے علم مٹی کی دھول میں دب گیا

انتظامیہ کی عدم توجہ سے علم مٹی کی دھول میں دب گیا


گوجرانوالہ ( 24نیوز ) کتاب علم کا خزانہ ہوتی ہے،انمول اور نایاب کتابوں کا گھرلائبریری ہی ہوتی ہے لیکن گوجرانوالہ کی سب سے پرانی لائبریری عدم توجہ کے باعث بھوت بنگلے میں بدلنے لگی۔
دیواروں میں پڑی دراڑیں ،کھڑکیوں کے ٹوٹے شیشے اور کتابوں کی ابتر حالت۔ یہ منظر ہے گوجرانوالہ کی سب سے پرانی شیخ دین محمد لائبریری کا جس میں تقریبا 15 ہزار سے زائد نایاب اور قیمتی کتب عدم توجہ کے باعث بیکار ہو رہی ہیں۔
اس قیمتی اثاثے کو آہستہ آہستہ دیمک چاٹ کر ختم کر رہی ہے،لائبریری میں نہ تو کوئی چیف لائبریرین ہے اور نہ ہی اس کا کوئی پرسان حال ہے۔
لائبریری میں کوئی بھی بنیادی سہولت کتب بینوں کے لئے موجود نہیں، 1965 کے بعد آج تک کوئی نئی کتاب بھی نہیں خریدی گئی اور نہ ہی اس لائبریری کی کوئی تزئین و آرائش کی گئی،اس کی صفائی کے لئے بھی نائب قاصد موجود نہیں ۔


الماریاں ٹوٹ جانے کے باوجود آج تک کتابوں کا بوجھ اٹھا رہی ہیں،لائبریری میں سہولیات نہ ہونے کے باعث کتب بینوں نے یہاں کا رخ کرنا ہی چھوڑ دیا ہے۔