بھارت کا سرجیکل سٹرائیک کا دعویٰ جھوٹا ہے:آصف غفور


اسلام آباد (24نیوز) ڈی جی آئی ایس پی آر میجرجنرل آصف غفور راولپنڈی جی ایچ کیو میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بھارت نہیں چاہتا دہشتگردی کیخلاف جنگ پر ہماری توجہ مرکوز رکھے، پاک فوج میں سرپھرے عناصر نہیں ہیں، بھارت کو بتایا تھا کلبھوشن کی فیملی کو سکیورٹی کلیئرنس کے بعد ملاقات کی اجازت دی جائیگی۔

تفصیلات کے مطابق ڈی جی آئی ایس پی آر نے کہااگر کوئی سازش ہے تو ثبوتوں کے ساتھ سامنے لائیں،خواجہ سعد رفیق کا بیان غیر ذمہ دارانہ ،غیر متعلقہ ہے،خواجہ سعد رفیق کا بیان آئین کی خلاف ورزی ہے جبکہ ایسے بیان دیں گے تو بہت ارتعاش پیدا ہو گا،،اگر ہم خود غیر ذمہ دار ہوں گے تو کوئی ہمیں ذمہ دار نہیں بنا سکتا۔

انہوں نے مزید کہا کہ کلبھوشن کی ملاقات کے حوالے سے کوئی دباؤ نہیں تھا ملاقات کو بھارت کے علاوہ سب نے سراہا،،آپ اچھا بھی کریں گے انڈین میڈیا نے رونا ہی ہے، سی پیک کے لئے مزید فورس بھی بنانا پڑی تو بنائیں گے،،سی پیک کی سکیورٹی پاک فوج کے ذمے ہے جبکہ سی پیک پاکستان اور چین کے معاشی رشتے کا نام ہے،،پاکستانی عوام کا ہمارے اوپر اعتماد وقت کی اہم ضرورت ہے،اگر بھارت اور افغانستان ہمارے ہمسائے نہ ہوتے تو پاکستان میں بہت امن ہوتا،2017 میں دہشتگردوں کے 7نیٹ ورک توڑے گئے۔

انہوں نے مزید کہا کہ پی ایس ایل کا فائنل لاہور میں کرانا ہماری فتح ہے،سال 2017میں فوجی عدالتوں سے سزا پانے والے 43مجرموں کو پھانسی دی گئی،ملک بھر میں 483دہشتگردی کے منصوبے ناکام بنائے گئے،خوشحال بلوچستان میں 60ارب روپے کے منصوبے شامل ہیں،بلوچستان میں 5اسپتال بنائے گئے۔ اب ڈومور کا مطالبہ افغانستان اور بھارت سے ہے،فاٹا کے 5ہزار سے زائد نوجوانوں کو بیرون ممالک کے ویزے دلوائے گئے،96فیصد ٹی ڈی پیز واپس جا چکےہیں، 2017میں عام شہریوں کے قتل میں نمایاں کمی ہوئی، ٹارگٹ کلنگ،بھتہ خوری،اغوا برائے تاوان میں واضح کمی ہوئی، پولیس کی استعداد بہتر ہونے سے اسٹریٹ کرائم میں کمی آئی ہے،2013کے مقابلے میں آج کراچی بہت پُر امن ہے،،2ہزار سے زائد فراری قومی دھارے میں شامل ہو چکے،ہیں۔

بھارتی پراپیگنڈے کو رد کرنے پر پاکستانی میڈیا کے شکرگزار ہیں،15نومبر کو آرمی چیف نے خوشحال بلوچستان منصوبے کی تجویز دی،دوستوں کے ساتھ مل کر کام کریں گے،،لیکن عزت پر سمجھوتہ کسی صورت نہیں کریں گے۔

ضرب عضب میں حقانی نیٹ ورک کیخلاف بھی کارروائی کی گئی،،افغانستان میں امن پاکستان کیلئے بہت ضروری ہے، پاکستان میں دہشتگردوں کا کوئی نیٹ ورک نہیں ،دہشتگردوں کیخلاف ضرب عضب میں بلا امتیاز کارروائی کی گئی، ہم کسی کے لئے اور کچھ نہیں کر سکتے، بھارت کا سرجیکل اسٹرائیک کا دعویٰ بالکل جھوٹا ہے، سرحد پر بھارتی فائرنگ سے 52شہری شہید ہوئے،کشمیر کی تحریک آزادی اس وقت بہت متحرک ہو چکی۔