وزیراعلیٰ پنجاب کو پروٹوکول کیوں نہیں دیا؟ ڈی پی او اور ڈی سی کو عہدے سے ہٹا دیا گیا

وزیراعلیٰ پنجاب کو پروٹوکول کیوں نہیں دیا؟ ڈی پی او اور ڈی سی کو عہدے سے ہٹا دیا گیا


سیالکوٹ (24نیوز) نئے پاکستان میں پولیس میں سیاسی مداخلت کاایک اورواقعہ سامنےآگیا۔ ڈی پی او اور ڈپٹی کمشنرسیالکوٹ کوسرکار کی آؤبھگت نہ کرنےپرمعطل کردیاگیا۔اس سےپہلے بھی نئی حکومت معمولی ایشوزپرافسران کوعہدےسےہٹاچکی ہے۔

تبدیلی سرکار کی پولیس میں مداخلت کاایک اورمن مانیوں کی ایک اورکہانی سامنےآگئی۔ وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدارنے پروٹوکول نہ دینے پر ڈی سی اومحمدطاہر وٹو اورڈی پی اوعبدالغفارقیصرانی کوعہدوں سے ہٹاکراو ایس ڈی بنادیا۔

پی ٹی آئی کےسو روزہ دورحکومت میں پولیس میں من چاہی تبدیلی کایہ کوئی پہلاواقعہ نہیں بلکہ اس سےپہلے ڈی پی اوپاکپتن کامتنازع تبادلہ کرکےجناب وزیراعلیٰ عثمان بزدارصاحب سپریم کورٹ میں معافی مانگ چکےہیں جبکہ آئی جی پنجاب محمدطاہرکی چنددنوں کی تعیناتی اورتبادلہ بھی کسی سےڈھکاچھپانہیں۔

نئے پاکستان میں پولیس میں سیاسی مداخلت کےواقعات صرف پنجاب تک ہی محدودنہیں۔وزیراعظم عمران خان بھی عثمان بزدارسےکم نہیں۔وفاقی وزیر اعظم سواتی کافون نہ اٹھانےپرآئی جی اسلام آبادکووزیراعظم کےزبانی احکامات پرہی فارغ کردیاگیاتھا۔

وقار نیازی

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔