کرتار پور راہداری ، بھارت میں پھوٹی چنگاری


اسلام آباد( 24نیوز )آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے بھارتی کرکٹر نوجوت سنگھ سدھو کی ”جپھی“سے شروع ہونیوالا سفر کرتار پور راہداری کے کھلنے تک جاپہنچا ہے،دنیا جسے امن کا راستہ قرار دے رہی ہے بھارتی حکومت،میڈیا اسے منفی لے کر ہنگامہ بپا کیے ہوئے،جس بھارتی میڈیا کو سدھو کی جپھی ناگوار گزری تھی اس کو گوپال چاولہ کا آرمی چیف سے ہاتھ ملانا ایک آنکھ نہیں بھایا،سکھ کمیونٹی جسے اپنی خوشی اور عید کا دن قرار دے رہی بھارتی حکومتی اسی پر ماتم کناں ہے۔

بھارت کا اعتراض ہے کہ خالص مذہبی تقریب کو سیاسی بنادیا گیا،ان کو وزیر اعظم کے کشمیر کا ذکر کرنے کا بھی غصہ ہے، جنرل باجوہ سے خالصتان تحریک سے منسلک رہنما گوپال چاولہ سے ہاتھ ملانے پر شدید ردعمل سامنے آیا ہے، بھارت نے ایک بار پھر پاکستان پر شدت پسندوں کی سرپرستی کرنے کا الزام عائد کیا ہے، بھارت کہتا ہے کرتار پور راہداری مقدس لیکن کشمیر انڈیا کا اٹوٹ انگ ہے،ایک چینل نے اس راہداری کو خالصتان کے قیام کیلئے پل قرار دے دیا ہے۔

انڈین میڈیا پر نشر اور شائع ہونے والی خبروں کے جواب میں پاکستان فوج کے ترجمان میجر جنرل آصف غفور نے ایک ٹویٹ کی جس میں اس امر پر افسوس کا اظہار کیا گیا،انہوں نے کہا کہ انڈین ذرائع ابلاغ آرمی چیف کو صرف گوپال چاولا سے ہاتھ ملاتے ہوئے دکھا کر تنگ نظری کا مظاہرہ کر رہا ہے۔ جنرل باجوہ بلا امتیاز تمام مہمانوں سے ملے۔ امن کے لیے اس طرح کے اقدام کو پروپیگنڈہ کی نذر نہیں ہونا چاہیے۔

یاد رہے وزیر اعظم عمران خان نے 28نومبر کو کرتار پور راہداری کا سنگ بنیاد رکھا ہے جس پر 6ماہ میں کام مکمل کیے جانے کا منصوبہ ہے،فیز ون میں نالہ بئیں اور دریائے راوی پردو پل بنائے جائیں گے، سڑک کی تعمیر کے لیے سروے مکمل کر لیا گیا،سڑک بھارتی سرحد میں قائم درشن پوائنٹ تک بنے گی جہاں بھارتی حکومت اپنے علاقے میں کوریڈور کا کام مکمل کرے گی۔

آرمی چیف کا بیان ۔۔ویڈیو دیکھیں: