عزم و ہمت،قربانیوں کی داستاں،پیپلزپارٹی 52سال کی ہوگئی

عزم و ہمت،قربانیوں کی داستاں،پیپلزپارٹی 52سال کی ہوگئی


کراچی (آزاد نہڑیو)پاکستانی سیاست کے پیچ وخم اور سرد وگرم سہہ کر پیپلزپارٹی 52 سال کی ہوگئی، نظریے اور عقیدت سے ہوتی ہوئی بھٹوز کی تخلیق اب عوام کی حق حکمرانی کے لیے کھڑی ہے۔

پاکستان پیپلزپارٹی ،جدوجہد کا استعارہ،تاریخ لہو رنگ،قیادت سے لیکر کارکن سبھی نے ابتلا اور آمریت کے خلافتاریخ رقم کی،52 سالہ تاریخ میں پیپلزپارٹی کا ہر گذ را سال طاقت کا سرچشمہ عوام ہے کہنعرے کے گرد ہی جدوجہد میں گزرا۔

لاہور سے لاڑکانہ اور کشمیر سے کراچی تک یکساں مقبول پیپلزپارٹی وہ واحد جماعت ہے جس نے مزدور کو مالک بنایا،ہاری کسان کے حقوق کی ضمانت دی اور

محروم ومجبور عوام کو زبان دی،شناختی کارڈ کا اجرا،متفقہ آئین اوربکھرے پاکستان کو ایٹمی طاقت بنانا بھٹوز کی پارٹی کے کارنامے ہیں۔

عدالتی قتل ہو یا مارشل لا کے زخموں کا دکھ یا پنڈی کی خون آشام شاہراہ پر بے نظیر بھٹو کی لاش کوکاندھا دینا ہو،اسیری جبری جلاوطنی اور پہاڑ صدمات برداشت کرنے کے بعد بھینعرہ مستانہ پیپلزپارٹی کا شیوہ رہا،کبھی ریاست سے سیاست کو مقدم نہیں رکھا،سیاست کو ڈرائنگ روم کی قید سے آزاد کرانیوالی بھٹوز کی پارٹی

بنگلوں بڑی گاڑیوں کے مالک سرداروں پیروں میروں کو عوام کے سامنے بے اثر کیا،ذوالفقار بھٹو سا جوش وجذبہ،بے نظیر کی استقامتاور وفا کے پیکر جیالوں کی تاریخ ملکی سیاسی منظرنامے میں کہیں اور نہیں۔

ذوالفقار علی بھٹو سے لیکر بے نظیر بھٹو تک گڑھی خدا بخش میں مدفون تمام نامور اور گمنام بھٹوزجمہور کے درمیان رہ کر تاریخ میں امر اور سرخرو ہیں، قیادت اب بلاول بھٹو کے ہاتھ ہے۔ انہیں دیکھنا اور سوچنا ہوگا کہ باون سال کی پیپلزپارٹی کو دوبارہ کیسے نظرئیے اور عقیدے سے جوڑنا ہے۔

اظہر تھراج

Senior Content Writer