بس ڈرائیور کا بیٹا پہلا پاکستانی نژاد برطانیہ کا وزیر داخلہ بن گیا


لندن( 24نیوز )پاکستانی نژاد ساجد جاوید برطانیہ کے وزیرداخلہ تعینات کردیے گئے اور وہ اس عہدے پر تعینات ہونے والے پہلے مسلمان شخص ہیں، برطانیہ ایک عیسائی اکثریتی ملک ہے۔

برطانوی میڈیا کے مطابق وزیر داخلہ ایمبر رڈ نے پارلیمنٹ کے سامنے غیرقانونی تارکین وطن کی واپسی سے متعلق غلط بیانی پر عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا جس کے بعد ساجد جاوید کو اس عہدے کی ذمہ داری سونپ دی گئی ہے۔

وزیر داخلہ کے عہدے کے لئے ساجد جاوید مضبوط ترین امیدوار کے طور پر سامنے ائے تھے جب کہ ان کے مقابلے میں وزیر ماحولیات مائیکل گوو، وزیر صحت جیرمی ہنٹ، وزیر برائے کابینہ امور ڈیوڈ لڈنگٹن اور وزیر برائے شمالی آئرلینڈ کیرن بریڈلی شامل تھے۔

 یہ بھی پڑھیں:کابل دھماکوں سے گونج اٹھا،25افراد جاں بحق, مرنیوالوں میں آٹھ صحافی بھی شامل

ترجمان وزیراعظم ہاوس کا کہنا ہے کہ ساجد جاوید کابینہ کے سب سے تجربہ کار وزرا میں سے ایک ہیں جنہوں نے مشکل صورتحال کو قابو کرنے کی خواہش اور عزم کا اظہار کیا، ساجد جاوید کی نئی جاب میں ان کی مہارت کی ضرورت ہے اور برطانوی وزرا کی سطح پر مزید تبدیلیوں کی امید نہیں ہے۔

یاد رہے کہ ساجد جاوید 2010 میں برومزگرو سے رکن پارلیمنٹ منتخب ہوئے تھے اور وہ اس سے قبل بطور کمیونیٹیز منسٹر خدمات انجام دے رہے تھے،ان کا پاکستان کے شہر ساہیوال سے آبائی تعلق ہے ان کے والد عبدالغنی بس ڈرائیور ہیں۔