ہاں میں فریادی ہوں ، وزیر اعظم پاکستان کا اعتراف


اسلام آباد(24نیوز) وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ہاں میں فریادی ہوں۔ فریادی بن کر چیف جسٹس سے ملنے گیا تھا، اس ملک کا فریادی ہوں۔

سرگودھا میں عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ  میں عوام کا ملازم ہوں اور چیف جسٹس ادارے کے سربراہ ہیں، چیف جسٹس سے عوام کی مشکلات دور کرنے کے لیے ملا تھا۔صرف ملک کی بات کی، کوئی ذاتی بات نہیں کی، میرے گواہ چیف جسٹس صاحب خود ہیں۔

انھوں نے کہا  کہ نیب عدالتوں سے ہمیں انصاف کی کوئی امید نہیں اور انہی عدالتوں نے ہمیں ہائی جیکر بنایا تھا۔ ایک اقامہ پر نواز شریف کو فارغ کردیا جو کہ ملک کے لیے نقصان ثابت ہوگا۔

یہ بھی پڑھیے: شریف خاندان کے وکیل، واجد ضیا میں تلخ کلامی، کمرہ عدالت میں گرما گرمی 

وزیر اعظم پاکستان شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ پرویز مشرف اور آصف زرداری کے دور میں ہر طرف افراتفری تھی۔ انھوں نے ملک کے لیے کوئی کام نہیں کیا۔ کل کے پاکستان کی نسبت آج کے پاکستان میں کافی ترقیاتی کام ہوئے اور یہ سب کام نواز شریف کے اقتدار میں ہوئے۔

  وزیراعظم پاکستان نے کہا کہ جیسے ہی ہمارے خلاف عدالتی حکم آیا ہم نے  فیصلہ کی سیاہی خشک ہونے سے پہلے عہدہ چھوڑ دیا لیکن ایسے فیصلوں سے ملک کا نقصان ہوتا ہے ترقی رک جاتی ہے جب کہ جو الزامات لگائے گئے ان میں کوئی حقیقت نہیں، کبھی دھرنے ہوئے ، کبھی عدالت میں گھسیٹا گیا۔

پڑھنا مت بھولیں: مودی سرکار کا اپنے شہریوں کو قبول کرنے سے انکار 

انہوں نے آصف زرداری اور عمران خان کو چیلنج کرتے ہوئے کہا کہ  ٹی وی پر آ کر صرف کہہ دیں کہ سینیٹرز کے ووٹ نہیں بکے  تو ہم یقین کر لیں گے، قوم بھی  ان کے منہ سے سننا چاہتی ہے کہ سینیٹ الیکشن میں پیسے نہیں چلے۔

اہم خبر: نیپرا نے بجلی صارفین کو بڑی خوشخبری دے دی

انھوں نے مزید کہ  مسلم لیگ ن   کی حکومت  اپنی مدت پوری کرے گی ۔  عوام جولائی میں ووٹ دے کر فیصلہ کرے گی کہ وہ کس کے ساتھ ہے۔  ان کا کہنا تھا پہلے سے زیادہ سیٹیں لے کر جیتیں گے۔