امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی طرف سے مسلمانوں کو بدنام کرنے کی کوشش ناکام


 (24نیوز): مسلمانوں کو بدنام کرنے کے لئے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی ٹویٹ نے نیا تنازع کھڑا کر دیا۔ ٹویٹ کے بعد امریکی صدر اور برطانوی وزیراعظم کے درمیان بھی ٹھن گئی، جبکہ وائٹ ہاؤس کا کہنا ہے کہ ویڈیو جعلی سہی لیکن ٹرمپ کا مسلمان کے حوالے سے خیال درست ہے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے مسلمانوں کو بدنام کرنے کی کوشش ناکام ہو گئی، ٹویٹ کی گئی ویڈیو جعلی ثابت ہوگئی۔ یہ ویڈیو برطانیہ کی انتہاپسند تنظیم نے ٹویٹ کی تھی، جس میں ایک شخص کو معذور نوجوان پر تشدد کرتے دکھایا گیا تھا، ٹرمپ کے مطابق یہ انتہاپسند مسلمان ہے۔نیدرلینڈ حکام کے مطابق یہ ویڈیو 6 ماہ پرانی ہے، تشدد کا شکار لڑکا بھی نیدرلینڈ کا باسی ہے اور تشدد کرنے والا بھی غیرمسلم ڈچ ہے۔

ٹویٹ کے بعد برطانوی وزیر اعظم نے کہا کہ تھا امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے اشتعال انگیز ویڈیوز کو ری ٹویٹ کرنا 'غلط' تھا، جبکہ لندن کے مئیر صادق خان نے وزیراعظم سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ٹرمپ کی دی گئی دورہ برطانیہ کی دعوت واپس لیں۔ٹیریزا مے کے ردعمل پر ڈونلڈ ٹرمپ نے پھر ٹویٹ کیا کہ برطانوی وزیراعظم ان پر نہیں برطانیہ میں بڑھتی اسلامی انتہاپسندی اور دہشت گردی پر توجہ دیں۔وائٹ ہاؤس نے ٹرمپ کے دفاع کے لئے میدان میں آگیا، ترجمان سارا سنڈرس نے ردعمل میں کہا کہ اگرچہ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی طرف سے جاری کردہ ویڈیو اصلی نہیں مگر صدر ٹرمپ کا مطلب یہ تھا کہ دہشت گردی کے حوالے سے اصل خطرہ مسلمان ہیں۔