دہشتگردوں کوجلد کیفر کردار تک پہنچانےمیں فوجی عدالتوں کا اہم کردار

دہشتگردوں کوجلد کیفر کردار تک پہنچانےمیں فوجی عدالتوں کا اہم کردار


اسلام آباد(24نیوز) دہشت گردوں کو جلد کیفر کردار تک پہنچانے کیلیے فوجی عدالتوں کا اہم کردارہے،  فوجی عدالتوں کی مدت میں ختم ہونےکی وجہ سےمقدمات کی کارروائی رک گئی۔ 

 فوجی عدالتوں کی مدت ختم ، توسیع نہ ہونے کے باعث کام بند ۔  14 ملٹری کورٹس میں سڑسٹھ مقدمات پر کارروائی تاحال نامکمل ہے ۔ سرکاری اعداد و شمار کےمطابق چار سال میں وزارت داخلہ کی جانب سے فوجی عدالتوں کو 717 مقدمات بھجوائے گئے ،جن میں سے 650 کیسز کے فیصلے سنا دیئے گئے۔

فوجی عدالتوں نے 310 دہشت گردوں کو موت کی سزا سنائی جن میں سے 56 کو پھانسی دیدی گئی ہے۔عدالتوں نے 234 ملزموں کو قید کی سزائیں بھی سنائیں ۔ملٹری کورٹس کے فیصلوں کیخلاف 283 نظرثانی پٹیشنز اور اپیلیں مختلف عدالتوں میں زیرالتوا ہیں ۔

آرمی پبلک اسکول پشاور پر حملے کےبعد ملٹری کورٹس جنوری 2015 میں دو سال کے لئے قائم کی گئیں جبکہ 2017 میں ان کی مدت دو سال بڑھائی گئی تھی۔