سانحہ ساہیوال:وزیر اعلیٰ پنجاب نے اپوزیشن کا بڑا مطالبہ مسترد کردیا



اسلام آباد( 24نیوز )وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے سانحہ ساہیوال پر جوڈیشل کمیشن کے قیام کا مطالبہ مسترد کردیا،وزیراعظم عمران خان سے ون آن ون ملاقات کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب کا کہنا تھا کہ سانحہ ساہیوال پر جوڈیشل کمیشن کی فوری طور پر ضرورت نہیں، واقعے کی تحقیقات شفاف انداز میں آگے بڑھ رہی ہیں اگر اس میں مسئلہ ہوا تو پھر دیکھیں گے۔

وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے کہا کہ پانچ اہلکاروں کے خلاف کارروائی کرچکے ہیں اور دو افسران کے خلاف معطلی کے بعد انضباطی کارروائی کی جارہی ہے۔ سانحہ ساہیوال واقعے میں ملوث ہر شخص کے خلاف کارروائی ہورہی ہے، واقعے کے حوالے سے دو روز میں دوبارہ بریفنگ لوں گا۔ وزیراعلیٰ پنجاب نے کہا کہ لواحقین کو 2 کروڑ روپے کی رقم دیں گے۔

وزیراعلیٰ کے حکم پر غریب شہری کی اراضی واگزار

ادھر وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کے حکم پر پولیس نے قصور کے علاقے ڈھنگ شاہ میں غریب شہری کے گھر پر با اثر افراد کا قبضہ چھڑا لیا۔ وزیراعلیٰ نے پی ٹی آئی کے مقامی چیئرمین خالد محمود ڈوگر کی جانب سے غریب شہری کے گھر پر قبضے کا نوٹس لیا تھا۔ وزیراعلیٰ نے قصور پولیس کو غریب شہری کے گھر کا قبضہ فوری واگزار کرانے کی ہدایت کی تھی۔  پولیس نے قبضہ گروپ کے خلاف قانونی کارروائی کی اور غریب شہری ریاض کو گھر کا قبضہ واپس دلایا۔

غریب شہری ریاض نے گھر واگزار کرانے پر وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کا شکریہ ادا کیا ہے۔وزیر اعلیٰ عثمان بزدارکا کہنا ہے کہ  قبضہ مافیا کے خلاف بلاامتیاز کارروائی جاری رہے گی۔ شہریوں کی جائیدادوں پر قبضے کرنے والے عناصر کے خلاف کوئی رو رعایت نہیں ہوگی۔  تحریک انصاف کی حکومت قبضہ مافیا کو کسی صورت برداشت نہیں کرے گی۔ قبضہ مافیا کے خلاف زیرو ٹالرنس کی پالیسی پر عملدرآمد جاری رہے گا۔ عثمان بزدار قبضہ مافیا کے ناسور کا مکمل خاتمہ کریں گے۔

اظہر تھراج

Senior Content Writer