سپریم کورٹ نے ایل ڈی اے سے غیرقانونی قبضے کی تفصیلی رپورٹ طلب کرلی

سپریم کورٹ نے ایل ڈی اے سے غیرقانونی قبضے کی تفصیلی رپورٹ طلب کرلی


24نیوز : سپریم کورٹ نے منشاء بم کیس میں ایل ڈی اے اور ضلعی حکومت سے قبضے کے بارے میں تفصیلی رپورٹ طلب کر لی۔ چیف جسٹس نے منشاء بم سے متعلق تفصیلی رپورٹ طلب کرتے ہوئے مزید سماعت ملتوی کر دی۔

چیف جسٹس پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں دو رکنی بنچ نے شہریوں کے پلاٹس پر غیر قانونی قبضے کرنے پر منشاء بم کیخلاف از خود نوٹس کی سماعت کی، چیف جسٹس پاکستان نے ڈپٹی کمشنر سے استفسار کیا کہ شہری علاقوں میں محکمہ مال کا کیا کردار ہے؟ سپریم کورٹ نے ممبر ریونیو کو مخاطب کیا اور کہا کہ بتائیں کہ کھاتہ اور کھتونی کیا ہوتا ہے؟ چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ رجسٹری پر گورنر ہاؤس لکھنے سے گورنر ہاؤس لکھنے والے کا نہیں ہو جاتا، چیف جسٹس پاکستان نے استفسار کیا کہ پٹوار سرکل کس قانون کے مطابق کام کررہا ہے؟

ڈپٹی کمشنر لاہور نے بتایا کہ منشاء بم کی اراضی کے ریکارڈ کے مطابق 1992 میں منشاء بم نے 32 کنال اراضی خریدی، جو بعد میں فروخت کر دی، منشاء بم کے خلاف درخواست گزار کو قبضہ ایل ڈی اے نے دینا ہے، چیف جسٹس نے منشاء بم سے متعلق تفصیلی رپورٹ طلب کرتے ہوئے مزید سماعت ملتوی کر دی۔

شازیہ بشیر

   Shazia Bashir   Edito