وہ سیارے جہاں تیزابی بارش ہوتی ہے

وہ سیارے جہاں تیزابی بارش ہوتی ہے


لاہور(ویب ڈیسک)ہم اکثر موسم کی شکایت کرتے ہیں اور آج کل تو خاص طور پر جب کہ زمین پر شدید موسمی تبدیلیاں عام ہو رہی ہیں۔لیکن کیا ہو گا کہ اگر ہم اپنی چھٹی ایسی جگہ پر گزاریں جہاں آٹھ ہزار کلو میٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے ہوائیں چلتی ہوں یا درجہ حرارت اتنا زیادہ ہو کہ سیسہ بھی پگھل جائے؟موسم اچھا ہو یا برا یہ ہمارے سیارے کی ایک مستقل حقیقت ہے اور خلا کی دوریوں میں تو یہ اور بھی شدید صورت میں موجود ہے۔

جہنم جیسا وینس ( زہرہ )

وینس یا زہرہ نظام شمسی کا سب سے زیادہ غیر مہمان نواز مقام ہے۔ وینس ایک طرح سے جہنم کی تصویر پیش کرتا ہے۔ وینس کی فضا بہت گہری ہے اور زیادہ تر کاربن ڈائی آکسائیڈ پر مشتمل ہے۔ وینس کا فضائی دباؤ زمین کے مقابلے میں 90 گنا زیادہ ہے۔اس  پر بارش انتہائی زہریلے سلفیورک ایسڈ یا گندھک کے تیزاب کی ہوتی ہے جو کسی بھی مسافر کی جلد یا خلائی سوٹ کو جلا دے گی۔ سیارے کے انتہائی زیادہ درجہ حرارت کی وجہ سے یہ بارش سطح تک پہنچنے سے پہلے ہی بخارات میں بدل جاتی ہے۔

ہنگامہ خیز نیپچون

یہ سیارہ زمین سے سب سے زیادہ دوری پر واقع ہے اور یہ جمی ہوئی میتھین کے بادلوں اور نظام شمسی میں سب سے خطرناک ہواؤں کا گھر ہے جن کی رفتار آواز کی رفتار سے بھی زیادہ ہوتی ہے۔سیارے کی سطح کے کافی حد تک ہموار ہونے کی وجہ سے میتھین ہواؤں کی رفتار کو کم کرنے کے لیے کچھ نہیں ہے، چنانچہ ان کی رفتار 2,400 کلومیٹر فی گھنٹہ تک پہنچ سکتی ہیں۔جب کوئی چیز آواز کی حدِ رفتار سے زیادہ تیز ہوجائے تو ایک دھماکہ خیز آواز پیدا ہوتی ہے اور وہ آپ یہاں آسانی سے سن سکتے ہیں۔ ساتھ ساتھ یہاں پہنچنے والے کو ہیروں کی بارش کا بھی تجربہ ہو گا جس کی وجہ فضا میں موجود کاربن کا دبنا ہے۔

لیکن آپ کو برستے ہوئے ہیروں کے سر پر گرنے کا کوئی خطرہ نہیں ہو سکتا، کیونکہ آپ پہلے ہی منفی 200 ڈگری سنٹی گریڈ درجہ حرارت میں جم چکے ہوں گے۔

نظام شمسی سے باہر کے سیارے

ٹام لاؤڈن کے مطابق وینس کی بالائی فضا زمین سے دور رہنے کے لیے شاید سب سے مناسب مقامات میں سے ایک ہے۔ سلفیورک ایسڈ کے بادلوں سے اوپر ایک ایسا مقام بھی آتا ہے جہاں فٰضا کا دباؤ زمین جیسا ہے۔آپ اس فضا میں سانس تو نہیں لے سکیں گے پر اگر آپ نے آکسیجن ماسک پہنا ہو تو شاید اس مقام پر آپ کا گزارا ہو جائے۔

یہاں ہواؤں کی رفتار 8,000 کلو میٹر فی گھنٹہ تک ہو سکتی ہے اور ہماری زمین کے مقابلے میں یہ سیارہ اپنے سورج سے 20 گنا زیادہ قریب ہے، چنانچہ اس کی فضا میں درجہ حرارت 1600 ڈگری سنٹی گریڈ ہے یعنی پگھلے ہوئے لاوا جتنا۔

Azhar Thiraj

Senior Content Writer