بیٹے کے کرتوتوں کے ذمہ دار حملہ آورکے والدین،مقدمے کیلئے درخواست دائر

بیٹے کے کرتوتوں کے ذمہ دار حملہ آورکے والدین،مقدمے کیلئے درخواست دائر


واشنگٹن ( 24نیوز )بیٹے کے اعمال کے ذمہ دار والدین ہیں،ان پر مقدمہ درج کیا جائے،امریکی سکول میں فائرنگ سے جاں بحق ہونیوالی پاکستانی طالبہ سبیکا شیخ کے والدین نے پٹیشن دائر کردی۔

اس سال مئی میں امریکی ریاست ٹیکساس کے شہر ہوسٹن میں واقع ایک ہائی سکول میں ہونے والی فائرنگ کے نتیجے میں ہلاک ہونے والے 10 بچوں کے والدین نے فائرنگ کرنے والے لڑکے کے والدین کے خلاف امریکی عدالت میں پٹیشن درج کروائی ہے۔

سبیکا کے والدین نے پٹیشن میں فائرنگ کرنے والے 17 سالہ لڑکے کے والدین پر الزام عائد کیا ہے کہ انھوں نے اپنے بیٹے کی ذہنی کیفیت جانتے ہوئے بھی اسے قانونی طور پر اسلحے تک رسائی دلوائی،سبیکا کے والد عبدالعزیز نے کہا کہ ہمارے لیے تو ایک جیتا جاگتا انسان چلا گیا، ہم کیسے چپ کر کے بیٹھ جائیں،یہ معاملہ صرف میڈیا کی حد تک نہیں اٹھانا ہے بلکہ اس کا مقصد ان سب بچوں کے لیے انصاف مانگنا ہے جو اس واقعے میں جاں بحق ہوئے۔

انھوں نے کہا کہ ہم اس انتظار میں تھے کہ حکومت اس بارے میں کوئی ٹھوس قدم اٹھائے گی، لیکن جب ایسا دیکھنے میں نہیں آیا تو ہم نے فیصلہ کیا کہ ہمیں ہی کچھ کرنا چاہئے،پٹیشن سبیکا کی سالگرہ کے روز، یعنی پہلی دسمبر سے دو دن پہلے 28 نومبر کو عدالت میں پیش کی گئی تھی جس کی خبر برطانوی جریدے گارڈین میں شائع ہوئی تھی۔

کچھ حلقے، جن میں فائرنگ کرنے والے لڑکے کے وکیل بھی شامل ہیں، اس دلیل کی نفی کررہے ہیں اور کہہ رہے ہیں کہ والدین پر اس طرح کی ذمہ داری عائد نہیں ہوتی،لیکن عبدالعزیز کہتے ہیں کہ اگر وہ اور باقی بچوں کے والدین چپ ہوگئے تو ایسے واقعات میں کمی نہیں آئے گی۔

مقدمے کی تفتیش ادارہ ایوری ٹائون فار گن سیفٹی کر رہا ہے،سبیکا کے والد نے بتایا کہ ان کا مطالبہ ہے کہ اس پٹیشن کے توسط سے لوگوں میں احساسِ ذمہ داری بڑھے

یاد رہے سترہ سالہ سبیکا ایکسچینج سٹوڈنٹ تھیں جو ٹیکساس میں پڑھنے گئیں۔ ان کے گھر واپس آنے میں تقریباً 20 دن رہ گئے تھے جب یہ واقعہ پیش آیا،17 سالہ طالبعلم دیمیتریوس پاگورٹزس جن کو فائرنگ کے بعد حراست میں لے لیا گیا تھا۔