اسماء قتل کیس حل ہوگیا:آئی جی خیبر پختونخوا


پشاور(24نیوز)آئی جی خیبر پختونخوا نے خون کے ایک قطرے سے مردان کا اسما ء قتل کیس حل کرنے کا دعوی کردیا،صلاح الدین محسود کہتے ہیں یہ ایک بلائنڈ کیس تھا جس کی کوئی سی سی ٹی وی فوٹیج تھی نہ ہی کوئی گواہ تھا،عاصمہ رانی کیس میں دو ملزم گرفتارکرلئے۔

تفصیلات کے مطابق خیبرپختونخوا کی مثالی پولیس نے مثالی کارنامہ سرانجام دے دیا، مردان کی تین سالہ اسماء کے قتل کیس کو پچیس روز میں حل کرنے کی گھنٹی بجادی۔

آئی جی صلاح الدین محسودنے اپنے افسروں کیساتھ بھاری بھرکم پریس کانفرنس میں اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ تین سالہ اسماء کاکیس جنسی تشدد کاتھا،زیادتی نہیں ہوئی،ملزم نے زیادتی کی کوشش کی،چیخنے پرگلہ دباکرہلاک کردیا۔

آرپی او مردان عالم شنواری کا کہنا تھا کہ پندرہ سالہ ملزم محمد نبی نے اعتراف جرم کرلیا، ملزم ایک ریسٹورنٹ میں کام کرتا ہے،،ملزم نے بچی کا گلہ دبایا جس سے اس کی موت ہوئی،، گردن پر انگلیوں کے نشان تھے

پولیس نے ہتھکڑیوں میں جکڑے تین سالہ اسما کے ملزم محمد نبی کو میڈیا کے سامنے پیش کردیا۔