مشال قتل کیس فیصلہ تاریخ ساز، کریڈٹ کے پی پولیس کو جاتا ہے: فواد چودھری


اسلام آباد (24 نیوز) پاکستان تحریک انصاف کے ترجمان فواد چوہدری نے سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ مشال قتل کیس کا فیصلہ تاریخ ساز ہے۔ ملزمان کو باقاعدہ تحقیقات کے بعد سزا ہوئی ہے۔ مرکزی مجرم کو پھانسی اور باقیوں کو 25 سال کی سزا سنائی گئی ہے۔ حدیبیہ کیس دوبارہ کھولنے کی درخواست کریں گے۔

سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ یہ ایک تاریخ ساز فیصلہ ہے۔ خیبر پختونخوا پولیس ذمہ داری سے اپنا اہم کردار ادا کر رہی ہے۔ جبکہ کے پی کے حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔

یہ بھی پڑھئے: مشال قتل کیس، ایک ملزم کو سزائے موت، 5 کو 25،25 سال قید کی سزا

انھوں نے واضح کیا کہ عاصمہ کا کیس الگ تھا جبکہ قصور میں دس بچیوں کے بعد زینب کے کیس میں پولیس ایکشن میں آئی ہے۔ پاکستان کے تمام اداروں نے مل کر کام کیا تھا۔ عاصمہ قتل میں کوئی فوٹیج نہیں تھی۔ تن تنہا کے پی کے حکومت نے ملزموں کو تلاش کیا۔

قصور واقعہ کے حوالے سے انھوں نے کہا کہ مجرم کو پکڑنے کے بعد پریس کانفرنس کی گئی اور تالیاں بجائی گئیں۔ ہم نے کے پی پولیس کو خودمختار کیا کہ وہ آزادانہ تحقیقات کرے۔ پنجاب حکومت کی طرح ہم ڈیکٹیشن نہیں دیتے ہیں۔

متعلقہ خبر: مقتولمشال خان کے بھائی نے مطالبات کے پی حکومت کے سامنے رکھ دیئے

توہین عدالت کی کاروائی پر بات کرتے ہوئے فواد چوہدری نے کہا کہ جلسوں میں دانیال اور طلال کے ہاتھ کھڑے کر کر کے دکھاتے ہیں۔ جس طرح قربانی کے بکروں کو پیش کرنے کے لیے گرتے ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ آج میڈیا کمشن کیس بھی تھا۔ جیو نے جھوٹی خبر چلائی کہ عاصمہ کی بہن نے لندن میں انٹرویو دیا جبکہ اس کی بہن نے اس بات کی تردید کی ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ ہمیں کے پی پولیس پر اعتماد ہے۔

پڑھنا نہ بھولئے:انتہا پسند فارن پالیسی ایجنڈا بڑھانا چاہتے ہیں، روکنا ہوگا؛ بلاول بھٹو زرداری

پارٹی ترجمان نے الزام عائد کیا کہ پی ٹی آئی کی پریس کانفرنس پاکستان ٹیلی وژن پر نہیں چلائی گئی۔ مریم نواز یا ن لیگ نے کیا پی ٹی وی خرید لیا ہے۔ پی ٹی وی ایک ریاستی ادارہ ہے۔ ن لیگ کے جلسوں کو باقاعدہ کوریج دی جاتی ہے۔ ریاستی اداروں کو ذاتی مفاد کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے۔