کیا ہم بے غیرت ہیں؟ چیف جسٹس کا نہال ہاشمی سے سوال

کیا ہم بے غیرت ہیں؟ چیف جسٹس کا نہال ہاشمی سے سوال


اسلام آباد (24 نیوز) ن لیگ کے رہنما نہال ہاشمی توہین عدالت کیس میں سپریم کورٹ میں پیش ہوئے،رہائی کے بعد بڑھکیں مارنے والے نہال ہاشمی عدالت کے اندرمعافیاں مانگتے رہے. سپریم کورٹ نے نہال ہاشمی کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کردیا۔ 

اڈیالہ جیل سے رہائی کے بعد معزز ججوں کو مغلظات بکنے والے نہال ہاشمی عدالت میں پیش ہوتے ہی تھرتھرکانپنے لگے،جیسے ہی کمرہ عدالت میں نہال ہاشمی کی ویڈیو چلائی گئی تو ہمیشہ اکڑے ہوئے رہنے والے ن لیگی رہنما گڑگڑا کرمعافیاں مانگنے لگے.

اہم خبر: تحریک انصاف بھی گرفت میں آ گئی، 12 مارچ کو بڑا فیصلہ سنایا جائیگا 

نہال ہاشمی نے کہا کہ وہ رہائی کے بعد ذہنی دباؤ کا شکارتھے،انہوں نے کہا کہ وہ مڈل کلاس آدمی ہیں،ان کے پاس ایک چونی بھی نہیں،وکالت کے بغیر بجلی کا بل بھی جمع نہیں کراسکتا،اب انہیں سزادی گئی تو ان کےبچے بھوکے مرجائیں گے،جس پرچیف جسٹس نے کہا کہ جن کے لیے آپ یہ سب کچھ کررہے ہیں وہ آپ کے لیے کوئی بندوبست کردیں گے.

ایک موقع پرتو نہال ہاشمی اپنے کہے گئے توہین آمیز الفاظ سے ہی مکرگئے،ان کا کہناتھا کہ جوالفاظ چلائے گئے وہ ان کے نہیں تھے،پھران کا کہناتھا کہ وہ آئندہ ایسا نہیں کریں گے،جس پرجسٹس اعجازالاحسن کا کہناتھا کہ آپ نے تویہ وطیرہ ہی بنالیا ہے، نہال ہاشمی نے چیف جسٹس سے کہا کہ وہ آپ کے وکیل ہیں جس پرچیف جسٹس نے کہا کہ انہیں گالیاں دینے والا وکیل نہیں چاہیے.

یہ بھی پڑھیں: نہال ہاشمی کے وکیل نےبھی ہاتھ کھڑے کر لیے

نہال ہاشمی کے وکیل کامران مرتضٰی نے کہا کہ انہیں اپنے موکل کے الفاظ پرشرمندگی محسوس ہوتی ہے،انہوں نے عدالت سے استدعا کی کہ وہ نہال ہاشمی کی مزید وکالت نہیں کرنا چاہتے جسے عدالت نے منظورکرلیا.

چیف جسٹس نے نہال ہاشمی کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کردیا،عدالت نے پاکستان بارکونسل اورتمام بارایسوسی ایشنز کوبھی نوٹس جاری کردئیے،کیس کی سماعت پیرتک ملتوی کردی گئی.