وزراء کی موجیں ختم،وفاقی کابینہ اجلاس میں بڑے فیصلے

وزراء کی موجیں ختم،وفاقی کابینہ اجلاس میں بڑے فیصلے


اسلام آباد(24نیوز) وزیراعظم کی زیرصدارت وفاقی کابینہ کےاجلاس میں بڑے فیصلے کئے گئے،30 ہزارمدارس کی رجسٹریشن کیلئے ون ونڈوآپریشن شروع ہوگا،وزارتوں میں سرکاری خرچ پرچائےپانی بندکردیا گیا۔

تفصیلات کے مطابقوزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت ہونے والے وفاقی کابینہ کے اجلاس کے بعد معاون خصوصی اطلاعات فردوس عاشق اعوان اور وزیرِ توانائی عمر ایوب نے نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے بتایا کہ مدارس کو وزارت تعلیم کے ماتحت نہیں کیا جا رہا بلکہ وزارت کے ساتھ منسلک کیا ہے،وزارت تعلیم ان مدارس میں بہتر تعلیم فراہم کرنے کیلئے معاونت کرے گی، 30 ہزار مدارس کی ون ونڈو رجسٹریشن وزارت تعلیم کے تحت ہوگی،کابینہ نے مختلف وزارتوں کو چائے پانی کی مد میں ملنے والا بجٹ ہمیشہ کیلئے ختم کردیا ہے آج کے بعد یہ خرچ وزیر کو اپنی جیب سے کرنا پڑے گا۔

 زیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہ کابینہ نے فیصلہ کیا ہے کہ تین ماہ کے اندر تمام وزارتوں اور ڈویژنز میں اضافی چارج کی پوسٹیں ختم کی جائیں گی اور وزیروں سے اضافی چارج واپس لیا جائے گا،انہوں نے دعویٰ کیا کہ آئندہ بجٹ قومی امنگوں کا ترجمان ہوگا اور اتحادیوں کو اعتماد میں لیا جائے گا،ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اور سعودیہ کے درمیان مزدوروں کی بھرتیوں کے حوالے سے معاہدے کی منظوری دی گئی ہے جب کہ ادوایات کی قیمتوں میں کمی کرکے 7 ارب روپے بچائے گئے ہیں۔

ضرور پڑھیں:انکشاف15 جون 2016

کابینہ نے پاکستان میں موبائل سگنلز کی سہولیات فراہم کرنے والی کمپنی جاز اور ٹیلی نار کے لائسنس کی 15 سال کیلئے توسیع کی منظوری دی ہے،اس فیصلے سے 1.37 بلین کی رقم ملے گی،ان کا کہناتھاکہ عمران خان نے وزیراعظم ہاؤس میں پاک چین یونیورسٹی بنانے کی بھی باقاعدہ منظوری دی جس میں چین سرمایہ کاری کرے گا، نواز شریف کی جیل واپسی کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہ سب سے بڑی عدالت کا سزا یافتہ مجرم سج دھج کر آج واپس جیل پہنچا۔انوکھا لاڈلا قیدی تمام قوانین کی دھجیاں بکھیر تاواپس جیل آیا۔

فردوس عاشق اعوان کا  مزیدکہناتھا کہ ن لیگ شرمندہ ہونے کے بجائے کرپشن کے ورلڈ کپ کے طور پر پیش کر رہی ہے، مجرم کو خوشنما بنا کر پیش کرنا جرم کی مدد کرنے کے مترادف ہے، وفاقی وزیرعمر ایوب نے پریس کانفرنس میں بتایا کہ پاکستان کا گردشی قرضہ 806 ارب روپے تک پہنچ چکا تھا ہم اس سال 293 ارب پر لائیں گے اور 2020 تک صفر کردیں گے، وزیراعظم نے ہدایات کی ہیں کہ رمضان میں بلا تعطل بجلی کی فراہمی یقینی بنائی جائے، افطار اور سحری کے اوقات میں کوئی لوڈ مینیجمینٹ نہیں ہوگی ۔

M.SAJID KHAN

CONTENT WRITER