عمران خان کی دہشتگردی ایکٹ کی دفعات ختم کرنے کی درخواست مسترد

عمران خان کی دہشتگردی ایکٹ کی دفعات ختم کرنے کی درخواست مسترد


اسلام آباد (24نیوز) عمران خان کی انسداد دہشتگردی عدالت سے مقدمہ منتقل کرنے کی درخواست مسترد ،انسداد دہشتگردی کی خصوصی عدالت نے عمران خان کی عبوری ضمانت میں انیس دسمبر تک توسیع کردی،عدالت نے عمران خان کو 19 دسمبر کو دوبارہ پیش ہونے کا حکم دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق عدالتی دائرہ کار سے متعلق عمران خان کی درخواست پر سماعت انسداد دہشت گردی کے جج شاہ رخ ارجمند نے کی۔ عمران خان کے وکیل بابر اعوان نے دلائل میں کہا کہ اس کیس میں کہیں بھی دہشت گردی کا عنصر نہیں ملا، بابر اعوان نے کہا کہ ایف آئی آر کے مطابق مظاہرین کے پاس ڈنڈے اور غلیل موجود تھیں ،باقر نجفی رپورٹ کے بعد تمام ٹی وی کہہ رہے ہیں کہ وزیر اعلی گرفتار ھو جائیں گے ،سرکاری وکیل کا کہنا تھا کہ بابر اعوان کے دلائل سے اختلاف کرتا ہوں، ،قانون ہاتھ میں لینا اور پولیس ملازم پر تشدد بھی دہشتگردی ایکٹ کے تحت قابل سزا جرم ہے۔

سرکاری وکیل نے کہا کہ چاروں مقدمات میں عمران خان مرکزی ملزم ہیں، عمران خان لوگوں کو لے کر آئے اور اپنی تقریروں کے ذریعے انہیں اشتعال دلایا، عمران خان نے وزیراعظم،سیکرٹری داخلہ اور آئی جی کو للکارا، عمران خان نے کہا کہ میں تمہارے خاندان کا جینا حرام کردوں گا،سرکاری وکیل نے کہا کہ دھرنے کے دوران 26پولیس اہلکار زخمی ہوئے،ان تمام کی میڈیکل رپورٹس موجود ہیں،ملزمان سے کٹر،ڈنڈے،غلیلیں برآمد کی گئیں۔

سرکاری وکیل نے استدعا کی کہ یہ مقدمہ انسداد دہشتگردی عدالت میں ہی چلایا جائے،بابر اعوان نے کہا کہ تقریروں کی بنیاد پر مقدمے بنائے جانے ہیں تو پاناما کیس سے اب تک 200سے زائد مقدمے درج ہوجانے چاہئیں تھے، عمران خان کہ رہے تھے لوگوں پر تشدد نہ کرو ،میرا پوائنٹ یہ ہے کہ ڈی چوک میں لوگ اس مقصد کے لئے جمع ہوئے تھے،ان لوگوں کا مقصد ہرگز دہشتگردی نہیں تھا،یہ وہ دھرنا ہے جس کے بارے میں سپریم کورٹ نے کہا کہ باہر سے اٹھ کر اندر آ جائیں،عدالت نے دلائل سننے کے بعد عمران خان کی مقدمات انسداد دہشتگردی سے منتقل کرنے کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔

بعد ازاں عدالت نے عمران خان کی انسداد دہشتگردی عدالت سے مقدمہ منتقل کرنے کی درخواست مسترد کردی۔عدالت نے عمران خان کی عبوری ضمانت میں 19دسمبر تک توسیع کرتے ہوئے عمران خان کو 19 دسمبر کو دوبارہ پیش ہونے کا حکم دے دیا۔