بھارت پھر درندگی پر اتر آیا،گھروں پر گولیاں برسادیں،سات کشمیری شہید


سرینگر ( 24نیوز ) مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں نے ریاستی دہشت گردی کی تازہ کارروائی کے دوران ضلع کولگام میں لڑکے سمیت مزید 7 نوجوان شہید کر دیئے۔
فوجیوں نے ضلع کے علاقے کھڈونی میں وانی محلہ کے مقام پر محاصرے اور تلاشی کی کارروائی کے دوران پرامن مظاہرین پر فائرنگ کر کے کم از کم 100 نوجوان زخمی کر دیئے جن میں سے 4 نوجوان 13سالہ بلال احمد ڈار، 28سالہ شرجیل احمد شیخ، فیصل الہٰی اور اعجاز احمد پالہ بعد میں زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسے۔ قابض فوجیوں نے آپریشن کے دوران 4 رہائشی مکانات بھی بارودی مواد کے ذریعے مسمار کر دیئے جن کے ملبے سے 3 نوجوانوں کی نعشیں برآمد ہوئیں۔

یہ بھی پڑھیں:روس تیار رہو، امریکی میزائل آ رہے ہیں: ڈونلڈ ٹرمپ
ایک انگریزی اخبار کی رپورٹ کے مطابق قابض بھارتی فوج نے کھڈ ونی وانی محلہ میں اپریشن کے دوران گن شپ ہیلی کاپٹروں کا بھی استعمال کیا گیا۔ قابض انتظامیہ نے طلباءکو احتجاجی مظاہروں سے روکنے کے لیے ضلع کولگام میں تمام تعلیمی ادارے بندکر دیئے ہیں۔ سرینگر کے علاوہ جنوبی اضلاع میں انٹرنیٹ فون سروس معطل کر دی ہے جبکہ سرینگر اور بانیہال کے درمیان ریل سروسز بھی معطل ہے۔ نوجوانوں کی شہادت پر شوپیاں اور پلوامہ اضلاع میں مظاہروں کا سلسلہ شروع ہو گیا ہے۔

نوجوانوں کی شہادت پر کشمیر یونیورسٹی سرینگر اور اسلامک یونیورسٹی اف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی اونتی پورہ میں زبردست مظاہرے کئے گئے۔ سینکڑوں طلباء نے مارچ کیا اور آزادی کے حق میں اور بھارت کے خلاف فلک شگاف نعرے لگائے۔ سوپور، بانڈی پورہ، ہندواڑہ اور دیگر مقامات پر بھی طلباءنے زبردست بھارت مخالف مظاہرے شروع کر دیئے۔
دوسری جانب بھارتی فوج نے کنٹرول لائن پر جنگ بندی کی خلاف ورزی بھی کی ہے،بھارتی فوج کی بلا اشتعال فائرنگ سے پانچ شہری زخمی جبکہ کئی مکانات تباہ ہوچکے ہیں۔

اظہر تھراج

صحافی اور کالم نگار ہیں،مختلف اخبارات ،ٹی وی چینلز میں کام کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں