نہال ہاشمی ایک بار پھر پھنس گئے


اسلا م آباد(24نیوز)حال ہی میں ایک ماہ جیل کاٹنے والے مسلم لیگ ن کے رہنماءنہال ہاشمی کی زبان نے ایک بار پھر پھنسا دیا ہے۔
مسلم لیگ ن کے رہنما نہال ہاشمی توہین عدالت کیس میں ایک ماہ قید کی سزا مکمل ہونے کے بعد چند روز قبل اڈیالہ جیل سے رہا ہوئے تو لیگی کارکنان کی بڑی تعداد نے ان کا استقبال کیا،خوب نعرے بھی لگا انہیں پھولوں کے ہار پہنائے اور شدید نعرے بازی کی۔اس موقع پر کوئی بھی لیگی رہنما اڈیالہ جیل کے باہر نہیں آئے۔
جوں ہی کارکنوں کی بڑی تعداد دیکھی تو نہال ہاشمی جذبات میں آگئے میڈیا کے سامنے اور ساتھیوں سے ایسی باتیں کردیں کہ وہ چیف جسٹس تک پہنچ گئیں،عدالت نے دوباہ طلب کیا اور چیف جسٹس نے اپنے ریمارکس میں انہائی دکھ کا اظہار بھی کیا تھا جس پر نہال ہاشمی کے وکیل نے معذرت بھی کرلی تھی۔

یہ بھی پڑھیے۔۔۔گیدڑوں کے ڈر سے شیروں کے قافلے نہیں رکتے:مریم نواز
جیل سے باہر آکر نہال ہاشمی ںے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ تمہارے ہاتھ میں جیل بھیجنا ہو سکتا ہے ،جان لینا ہو سکتا ہے لیکن عزت اور ذلت میرے رب کے ہاتھ میں ہے،سازشیو تمھارے ہاتھ میں کچھ نہیں ہے،میں نے کل جو کہا تھا آج بھی کہ رہا ہوں، نہال ہاشمی نے کب کسی چاچے یا ماے رحمتے کی توہین کی؟ شرمندہ وہ ہو جو چور ہے۔ میرا کل بھی قائد نوازشریف تھا آج بھی ہے،مجھے نواز شریف کے قیادت میں کام کرنے سے اللہ کے سوا کوئی نہیں روک سکتا۔
اس بیان پر عدالت نے نہال ہاشمی کو عدالت طلب کیا جہاں انہوں نے ایکٹنگ کرنے کا بہانا بنایا،آج پھر کیس کی سماعت ہوئی، چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے 3 رکنی بنچ نے نہال ہاشمی کے خلاف کیس سماعت کی۔
سماعت کے دوران نہال ہاشمی نے عدالت عظمیٰ میں اپنا جواب جمع کروایا، جس میں موقف اختیار کیا گیا کہ انہوں نے عدالت کے بارے میں ایسے الفاظ نہیں بولے، نہال ہاشمی کا کہنا تھا کہ 'قرآن پاک بھی عدل کرنے کا حکم دیتا ہے، میں عدالت کے لیے جیل گیا اور عدلیہ کے لیے اپنی جان دے دوں گا'۔کیا مجھے سیاسی طور پر نشانہ بنایا جا رہا ہے؟سینیٹر شپ چلی گئی، اب میرے پاس کیا بچا ہے؟'

یہ بھی پڑھیے۔۔۔سینٹ کا چیئرمین،ڈپٹی چیئرمین کون ؟فیصلہ آج ہوگا

سپریم کورٹ نے توہین عدالت کیس میں مسلم لیگ (ن) کے سابق سینیٹر نہال ہاشمی کا جواب غیرتسلی بخش قرار دیتے ہوئے ان پر فرد جرم عائد کرنے کے لیے 26 مارچ کی تاریخ مقرر کردی ہے۔

اظہر تھراج

صحافی اور کالم نگار ہیں،مختلف اخبارات ،ٹی وی چینلز میں کام کا وسیع تجربہ رکھتے ہیں