نئے مالی سال میں مہنگائی کی رفتار مزید تیز

نئے مالی سال میں مہنگائی کی رفتار مزید تیز


اسلام آباد(24 نیوز) نئے مالی سال میں مہنگائی کی رفتار بھی مزید تیز ہوگئی،  ہفتے کے دوران کھانے پینے اور روزمرہ استعمال کی 31 بنیادی اشیا مزید مہنگی ہو گئیں، ہفت روزہ بنیاد پر مہنگائی کی شرح پندرہ فیصد سے بھی تجاوز کر گئی۔

 ادارہ شماریات کے مطابق جولائی کے دوسرے ہفتے کے دوران ہفت روزہ بنیاد پر مہنگائی میں اضافے کی اوسط شرح پندرہ اعشاریہ صفر ایک فیصد تک پہنچ گئی، گزشتہ سال یہ شرح چار اعشاریہ دو فیصد تھی، ہفتے کے دوران مارکیٹ میں آلو، لہسن، چینی، آٹا، گھی، دال ماش، دال مونگ، دال مسور، دال چنا، مٹن، بیف، دودھ اور دہی کی قیمت میں اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔

روزمرہ استعمال کی اشیا میں سے گیس، کپڑا، صابن، انرجی سیور اور جلانے کی لکڑی بھی مہنگی ہوگئی۔  مسلسل مہنگائی کے باعث مارکیٹ میں کھانے پینے اور روز مرہ استعمال کی 53 بنیادی اشیا میں سے 46 اشیا گزشتہ سال کے مقابلے میں 91 فیصد تک مہنگی ہو چکی ہیں۔ رپورٹ کے مطابق گیس گزشتہ سال سے 91 فیصد مہنگی جبکہ لہسن گزشتہ سال سے 74 فیصد مہنگا ہے، دال مونگ کی قیمت 49 فیصد، پیاز کی 44 فیصد، چینی کی 31 فیصداور دال ماش کی قیمت 20 فیصد زیادہ ہوچکی ہے، سگریٹ گزشتہ سال کے مقابلے میں 48 فیصد مہنگا جبکہ کپڑا 20 فیصد مہنگا ہو چکا ہے۔