حکومت کے آئی ایم ایف سے معاملات طے پاگئے



واشنگٹن(24نیوز)حکومت کے آئی ایم ایف سے معاملات طے پاگئے،بیل آئوٹ پیکج 3 سال کیلئے ہوگا۔قرض می مالیت 6سے 8 ارب ڈالر تک ہو سکتی ہے،معاہدے کیلئے آئی ایم ایف کا وفد اسی ماہ پاکستان آئے گا۔

وزیر خزانہ اسد عمر نے کہا ہے کہ میڈیم ٹرم اکنامک فریم ورک تیار کیا ہے جس کو وزیر اعظم اور اکنامک ایڈوائزری کے ساتھ شئیر کیا،واشنگٹن میں آئی ایم ایف، ورلڈ بنک، ایشیائی ترقیاتی بنک حکام کے ساتھ ملاقات ہوئی۔ آئی ایم ایف کے ساتھ اتفاق رائے ہو گیا ہے۔ آئی ای ایف مشن اپریل کے آخری ہفتے می پاکستان پہنچے گا۔ مشن کے پہنچنے پر مالیاتی قرض کا معاہدہ فائنل ہو جائے گا۔

انہوں نے کہا ہے کہ آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدہ کمیٹی اجلاس میں بھی شئیر کیا جائے گا۔ورلڈ بنک اور ایشیائی ترقیاتی بنک نے پاکستان میں جاری معاشی اصلاحات کو سراہا۔آئندہ ورلڈ بنک اور ایشیائی ترقیاتی بنک کی جانب سے بھی پاکستان کی مدد کی جائے گی۔زرمبادلہ کے ذخائر جو تیزی سے گر رہے وہ بھی مستحکم ہو جائیں گے۔

ماضی میں آئی ایم ایف معاہدے کی تفصیلات کسی نے نہیں بتائیں، یہاں قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی خزانہ کے اجلاس میں کوئی نہیں آتا،میں یہاں آئوں گا,  تفصیلات پیش کروں گا ۔

اظہر تھراج

Senior Content Writer