امریکہ بھارت کو جارحیت سے باز رکھے: تہمینہ جنجوعہ

امریکہ بھارت کو جارحیت سے باز رکھے: تہمینہ جنجوعہ


اسلام آباد (24 نیوز) سیکرٹری خارجہ امور تہمینہ جنجوعہ نے کہا ہے کہ پاکستان کی انسداد دہشت گردی کے لیے کوششیں پورے خطہ کے امن کے لیے معاون ثابت ہوں گی۔ امریکہ بھارت کو جارحیت سے باز رکھے۔

انھوں نے امریکی قائم مقام معاون وزیر خارجہ ایلس ویلز سے ملاقت میں بھارتی آرمی چیف کے حالیہ غیر ذمہ دارانہ بیانات کی جانب امریکی وفد کی توجہ مبذول کراتے ہوئے ایل او سی اور ورکنگ باؤنڈری پر بھارتی جارحیت کا معاملہ اٹھایا اور مطالبہ کیا کہ امریکہ بھارت کو جارحیت سے باز رکھے۔

دفتر خارجہ سے جاری بیان کے مطابق پاکستان کے دورے پر آئی ہوئی امریکی قائم مقام معاون وزیرخارجہ ایلس ویلز کی دفتر خارجہ میں سیکرٹری خارجہ امور تہمینہ جنجوعہ سے ملاقات ہوئی۔ ملاقات کے دوران امریکی وفد کو پاکستان کی دہشتگردی کے خلاف کیے جانے والے حالیہ آپریشنز اور ان کے نتیجہ میں امن و امان کی بہتر صورتحال سے آگاہ کرتے ہوئے سیکرٹری خارجہ نے کہا کہ یہ کاوشیں پورے خطہ کے امن کے لیے معاون ثابت ہوں گی۔ دونوں ملکوں کو باہمی تعلقات آگے بڑھانے کے لیے ایک دوسرے پر اعتماد کرنا ہو گا۔

ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق انہوں نے امریکی وفد کے سامنے افغان سرزمین کو دہشتگردوں کی جانب سے پاکستان مخالف سرگرمیوں پر استعمال ہونے اور پاک افغان سرحد پر مؤثر سرحدی انتظام کے حوالے سے بھی اپنے خدشات سے امریکی وفد کو آگاہ کیا۔

ایلس ویلز نے دہشتگردی کے خاتمہ کے لیے پاکستان کی کوششوں کا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ مستقبل میں بھی پاکستان کے ساتھ مل کر کام کرنے کا خواہاں ہے۔ امریکی قائم مقام معاون وزیرخارجہ ایلس ولز نے کہا کہ افغانستان میں امریکی حکمت عملی کی کامیابی کے لیے پاکستان کا کردار نہایت اہم ہے ۔

دفتر خارجہ کے ترجمان کا کہنا تھا کہ افغانستان میں پائدار امن کے لیے پاکستان اور امریکہ کے درمیان انٹیلی جنس تعاون بڑھانے اورافغانستان میں امن کے لیے افغان حمایت یافتہ سیاسی حل پر اتفاق بھی کیا گیا۔  دورہ، پاکستان اور امریکہ کے درمیان دو طرفہ مزاکراتی عمل کے سلسلہ میں تھا۔

ملاقات میں امریکی سفیر ڈیوڈ ہیل بھی شریک تھے۔