پشاور: محکمہ معدنیات کے افسروں، اہلکاروں پر غیرقانونی مائننگ کا الزام


پشاور (24نیوز) محکمہ معدنیات خیبرپختونخوا کے افسروں اور اہلکاروں کے مالی بے ضابطگیوں میں ملوث ہونے کا انکشاف ہوا ہے، نیب نے ملوث افسروں اور اہلکاروں کے خلاف تحقیقات کا حکم دے دیا۔

 تفصیلات کے مطابق نیب خیبرپختونخوا ریجنل بورڈ کا اجلاس ہوا،جس کی صدارت ڈی جی نیب نے کی ۔ نیب کےپی نے محکمہ معدنیات کے افسران و اہلکاروں کے خلاف تحقیقات کا حکم دیدیا۔

اہلکاروں وافسران پرکروڑوں کی غیرقانونی مائنگ کاالزام ہے۔ ایگزیکٹیوانجینیئرفاٹا کنزٹرکشن ڈویژن ٹیسکوکےخلاف 5ٹھیکےایک ہی ٹھیکہ دارکو دیئے جانے پر انکے خلاف اختیارات کےناجائز استعمال پرتحقیقات کا حکم دے دیا۔

ڈی جی نیب نے سوات ایکسپریس کی  پیمائش میں ردوبدل اورمتاثرین کو دی جانےوالے400ملین کی غبن کےالزام میں پختونخوا ہائی وےاتھارٹی حکام کےخلاف تحقیقات کا بھی حکم دے دیا۔

نیب نے ٹورازم کےپی کےخلاف 850 ملین کی غبن کےالزام میں حکام کےخلاف تحقیقات کا حکم بھی جاری کردیا ۔ ٹورازم حکام پرہاسٹل، روڈزودیگرتعمیراتی کاموں میں غبن کا الزام ہے