چیف جسٹس نے پرائیویٹ ہسپتالوں کیخلاف سخت نوٹس لے لیا

چیف جسٹس نے پرائیویٹ ہسپتالوں کیخلاف سخت نوٹس لے لیا


لاہور(24نیوز) چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثارنےآج لاہورمیں عدالت لگائے رکھی۔سپریم کورٹ لاہوررجسٹری میں کئی اہم کیسز کی سماعت کرتے ہوئے احکامات بھی جاری کیے۔

 چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس ثاقب نثار نے چھٹی کے روز بھی لاہور میں عدالت لگائی۔پرائیویٹ اسپتالوں میں مہنگے علاج، پارکنگ کی عدم دستیابی اور غیرقانونی اسپتالوں کی تعمیر پر چیف جسٹس ثاقب نثار نے اظہار برہمی کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ کسی کو مادر پدر آزادی نہیں دے سکتے، ڈاکٹر لوگوں کی خدمت نہیں کرسکتے تو اسپتال بند کردیں۔ 

چیف جسٹس ثاقب نثار نے منرل واٹر کمپنی نیسلے کے فرانزک آڈٹ کروانے کا حکم دے دیا۔منرل واٹر فروخت کرنیوالی کمپنیوں سے متعلق ازخود نوٹس کی سماعت کےدوران منرل واٹر کمپنیوں کے پانی کے نمونے چیک کروانے کا حکم دیتے ہوئےچیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ بیس سال سے کمپنیاں صرف منافع کما رہی ہیں۔عدالت نے کمپنیوں کی جانب سے آڈٹ کے لئے ایک ماہ کی مہلت دینے کی استدعا مسترد کردی۔

چیف جسٹس پاکستان نےتعلیمی اداروں میں منشیات کے استعمال پر ازخود نوٹس بھی لیا۔چیف جسٹس نےریمارکس دیے کہ تعلیمی اداروں میں منشیات کےفروغ سےہم اپنامستقبل تباہ کررہے ہیں۔اس حوالے سےتشویش کااظہارکرتے ہوئےسی سی پی او لاہور،محکمہ اینٹی نارکوٹکس سمیت دیگر حکام سے ایک ہفتے میں جواب طلب کر لیا۔

وقار نیازی

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔