سپریم کورٹ نےاے ڈی خواجہ کو آئی جی سندھ برقرار رکھنے کا حکم دے دیا

سپریم کورٹ نےاے ڈی خواجہ کو آئی جی سندھ برقرار رکھنے کا حکم دے دیا


اسلام آباد(24نیوز) آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ کی تقرری کا معاملہ، سپریم کورٹ نے آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ کی تقرری کے معاملے پروفاق کو اقدامات اٹھانے سے روک روکتے ہوئے آئی جی سندھ برقرار رکھنے کا حکم دے دیا، سپریم کورٹ نے سندھ ہائیکورٹ کے فیصلے کیخلاف صوبائی حکومت کی اپیل سماعت کے لئے منظورکر لی۔

 تفصیلات کے مطابق عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا کہ اے ڈی خواجہ کو سندھ پولیس میں تبادلے کرنے کا مکمل اختیار ہوگا۔چیف جسٹس نے اپنے ریماکس میں کہا کہ آئی جی سندھ کی تقرری کے معاملے پر وفاقی حکومت کے کسی اقدام کی کوئی حیثیت نہیں ہوگی۔ سندھ میں آئی جی پولیس کی تقرری کا معاملہ عدالتی فیصلے سے مشروط ہوگا۔ آئی جی کی تبدیلی سے متعلق وفاقی و صوبائی حکومتوں کے احکامات معطل تصور ہونگے۔

وکیل سندھ حکومت فاروق ایچ نائیک نےاپنا موقف اختیار کرتے ہوئے عدالت کو بتایا کہ سندھ ہائیکورٹ نے پولیس ایکٹ 2011 کو آئینی قرار دیا۔ سندھ ہائیکورٹ نے اے ڈی خواجہ کو پولیس میں تبادلوں کا اختیار بھی دے دیا۔ چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ سندھ ہائیکورٹ نے بہت خوبصورت فیصلہ دیا ہے۔ سندھ ہائیکورٹ کا فیصلہ دوتین بار پڑھنے کے لائق ہے۔ وکیل سندھ حکومت نے عدالت کو بتایا کہ سندھ ہائیکورٹ نے جو مانگا نہیں گیا تھا وہ درخواستگزار کو دے دیا۔ سندھ ہائیکورٹ کے پاس ازخودنوٹس کا اختیار نہیں۔ چیف جسٹس کے ریمارکس دئے کہ ہمارے پاس تو ازخود نوٹس کا اختیار ہے۔ چیف جسٹس نے ایڈووکیٹ جنرل سندھ کو روسٹرم پر دلائل دینے سے روک دیا۔چیف جسٹس کی ایڈووکیٹ جنرل سندھ کو ہدایت کی کہ آپ روسٹرم سے ہٹ جائیں۔ فاروق نائیک کو لیٹر دے کر آپ نے اپنی کم استعداد کار ظاہر کردی ہے۔ آپ کو روسٹرم پر بات کرنے کا اب کوئی حق نہیں۔ وکیل سندھ حکومت نے عدالت سےاپیل پر سماعت کی تاریخ مقرر کرنے کی استدعا کی۔