زینب کا قاتل اب تک آزاد

زینب کا قاتل اب تک آزاد


24نیوز :بچوں کےساتھ زیادتی کے واقعات کوروکنےکے نئی حکومت کے دعوے بھی دھرے رہ گئے،بچوں کیساتھ زیادتی کے ملک بھر میں روزانہ 11 کیسزرپورٹ ہورہے ہیں، زینب کو تو انصاف مل گیا لیکن اور زینب انصاف کی منتظر ہے۔

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم کا منصب سنبھالتے ہی عمران خان نے پہلی تقریر میں بچوں کیساتھ جنسی زیادتی کی روک تھام کیلئے سخت قانون متعارف کرانے کااعلان کیا تھا، تاہم ابھی تک چند ہدایات کے بعد بات آگے نہیں بڑھ پائی ،2017 میں 3445 بچوں کیساتھ جنسی زیادتی کے واقعات رجسٹرڈ ہوئے، سب سے زیادہ پنجاب میں ہوئے جبکہ وفاقی دارالحکومت میں بھی 3 واقعات رجسٹرڈ ہوئے، سول سوسائٹی کا کہنا ہے کہ قوانین پرعمل درآمد یقینی بنانا ہوگا۔

قصور کی زینب قتل کیس کا مجرم اپنے انجام کو پہنچا لیکن ظفروال میں زیادتی کے بعد قتل ہونے والی ایک اور زینب ہے جس کے قاتل آزاد گھوم رہے ہیں اور اس کے والدین انصاف کے منتظر ہیں۔

ملک بھر میں روزانہ 11 کیسزرورٹ ہوتے ہیں جبکہ اندازے کے مطابق اس سے کہیں زیادہ کیسزرونما ہوتے ہیں،بابر اعوان کہتے ہیں بچوں کیساتھ جنسی زیادتی کرنے والوں کو پھانسی پرلٹکانا چاہیئے ، اٹھارویں ترمیم کے تحت ہر صوبہ بچوں کیساتھ جنسی زیادتی پرقانون سازی کا حق رکھتا ہے تاہم موجودہ  قانون پرعملدرآمد سے بچوں کو محفوظ بنایا جاسکتا ہے۔