'میرے ساتھ بھی ایسا ہوا'میشا شفیع کے بعد مومنہ نے بھی خاموشی توڑ دی

'میرے ساتھ بھی ایسا ہوا'میشا شفیع کے بعد مومنہ نے بھی خاموشی توڑ دی


لاہور (ویب ڈیسک)خواتین کی مردوں اور مردوں سے خواتین کی جنسی ہراسگی صرف پاکستان میں ہی نہیںدنیا بھر میں بہت بڑا مسئلہ ہے،شوبز یا میڈیا انڈسٹری میںاس لیے زیادہ لگتا ہے کیونکہ مشہور ہونے کی وجہ سے ان کی خبر بن جاتی ہے لیکن یہ سب گھر وںمیں کام کرنیوالی خواتین جن کو ماسیاں کہا جاتا ہے ان کے ساتھ بھی ہوتا ہے دفاتر میں مردوں کے ساتھ خواتین کے ساتھ بھی ہوتا ہے۔
ہالی ووڈ اور بالی ووڈ میں تو یہ عام ہے،ہدایت کار ہاروی وائن سٹائن پر کئی خواتین اداکاﺅں نے جنسی ہراسگی کا الزام لگایا،جن میں گوینتھ پالٹرو، اینجلینا جولی ، کارا ڈیولین، لیا سیڈاکس، روزانا آرکویٹا اور میرا سوروینو جیسی کئی شامل ہیں، یو ایس اے ٹوڈے کے ایک سروے کے مطابق فلم انڈسٹری میں 94 فیصد خواتین جنسی ہراسانی کا شکار ہوتی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:ہالی ووڈ کی خوفزدہ خواتین،جنسی ہراسگی کا ہوشربا انکشاف
امریکا میں فزیوتھراپسٹ کے ایک سروے سے انکشاف ہوا کہ 80 فیصد معالجین کو ان کے مریض کسی نہ کسی طرح جنسی طور پر ہراساں کرتے ہیں۔،اس سروے میں تھراپسٹ نے پیش آنے والے اپنے واقعات بھی بیان کیے ہیں اور کل 900 کے قریب فزیوتھراپسٹ نے اپنی رائے دی ہے۔ فزیو تھراپسٹ نے کہا کہ ان کے مریض نازیبا جملے، غیر ضروری طور پر چھونے، خود کو ظاہر کرنے اور جنسی حملے تک کے مرتکب ہوئے ہیں اور یہ واقعات گزشتہ سال پیش آئے ہیں۔
اس گھناﺅنے کھیل سے فیس بک کے بانی مارک زکربرگ کی بہن رینڈی زکربرگ بھی نہ بچ پائیں ،ان کے مطابق لاس اینجلس سے میکسیکو کے شہر ماساتلان جانے والی الاسکا ایئرلائنز کی پرواز میں ایک شخص نے اپنی غیر اخلاقی باتوں سے انہیں مسلسل ہراساں کیا تاہم عملے نے شکایت کے باوجود اس شخص کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی۔
بالی ووڈ سے بھی جنسی ہراسگی کی کئی خبریں سامنے آئیں ،دیپیکا پڈوکون،پرینیتی چوپڑا،کنگنا رناوت،رادھیکا آپتے بھی کہتی ہیں کہ ہمارے ساتھ بھی بچپن یا جوانی میں ایسا ہوا تھا،میراٹھی ،ملیالم اور تامل فلموں کی تو کئی اداکارائیں اس کا شکار ہوکر خودکشی بھی کرچکی ہیں۔
جنسی ہراسگی کے معاملے میں سیا ستدان بھی پیچھے نہیں رہے،یہ مختلف تقریبات اور اسمبلیوں میں گل کھلاتے پائے گئے ہیں،امریکی سینئر بش پر تو سولہ سالہ لڑکی کو چھیڑنے کا الزام لگا،پاکستانی شیخ رشید اسمبلی اجلاس میں غلط اشارے کرتے پائے گئے،سیاسی جماعتوں کے جلسوں میں بھی خواتین کارکنوں کی طرف سے شکایات سامنے آئیں۔

یہ بھی پڑھیں:”طیفا ان ٹربل“مزید چار خواتین نے علی ظفر پر جنسی ہراسگی کا الزام لگا دیا
گلو کارہ میشا شفیع نے علی ظفر پر جنسی ہراسگی کا نشانہ بنانے کا الزام عائد کیا تو اس پر شوبز کی دوسری شخصیات بھی میدان میں آئیںان میں میک آرٹسٹ لینا غنی،ماہم جاوید،حمنہ رضا اور ایک خاتون کے بعد کوک سٹوڈیو سے شہرت پانے والی مومنہ مستحسن بھی میدان میں آ گئی ہیں ان کا کہنا ہے کہ مجھے بھی ہراسگی کا سامنا کرنا پڑاہے اور یہ مسئلہ علی ظفر کے مسئلے سے بھی بڑا ہے ، مومنہ کا کہناتھا کہ میں علی ظفر اور دیگر مردوں سے یہی سوال پوچھنا چاہتی ہوں کہ اگر آپ نے کبھی نا چاہتے ہوئے بھی ایسی حرکت کی ہے تو آپ غیر مشروط معافی مانگیں اور اپنی غلطیوں سے سیکھتے ہوئے بہتر انسان بنیں،ان کا کہناتھا کہ ہم اس لیے بول رہیں کیونکہ ہمارے پاس کوئی دوسری آپشن نہیں ہے ، کیونکہ ہمارے پاس ایسا کوئی نہیں ہے جو ہمارے لیے کھڑا ہو سکے،مومنہ نے اپنے انسٹا گرام اکاﺅنٹ پر ایک لمبی تحریر بھی لکھ ڈالی ہے۔

مومنہ مستحسن کے بعد خوبصورت کے کردار سے مشہور عائشہ عمر نے بھی اپنے ساتھ کچھ غلط ہونے کا اشارہ دیا ہے،وہ کہتی ہیں کہ مجھے بار بار ایسی کیفیت کا سامنا کرناپڑا۔