اسٹیٹ بینک رپورٹ ،ملکی زرمبادلہ پر دباؤ بڑھ گیا


اسلام آباد(24نیوز) رواں مالی سال کا کرنٹ اکاونٹ خسارہ 10 ارب 82 کروڑ ڈالرسے تجاوز کر گیا، درآمدات اور بیرونی قرضوں کی واپسی کے اخراجات بڑھنے سے کرنٹ اکاونٹ خسارہ بھی 50 فیصد بڑھ گیا۔

اسٹیٹ بینک کے مطابق جولائی سے فروری تک کرنٹ اکاونٹ خسارہ جی ڈی پی کے 4.8 فیصد تک پہنچ گیا۔ 8 ماہ کے دوران بیرونی کھاتوں میں 10 ارب 82 کروڑ 60 لاکھ ڈالر کا ریکارڈ خسارہ رہا۔ ملکی برآمدات میں اگر چہ پچھلے برس کے مقابلے میں 12.2 فیصد اضافہ ہوا۔ درآمدات 17.3 فیصد اور بیرونی قرضوں کی واپسی کے اخراجات 25 فیصد تک بڑھ گئے۔

یہ بھی ضرور پڑھیں:ڈالر نے روپے کو پچھاڑ دیا،مہنگائی میں کس حد تک اضافہ ہو سکتا ہے،بڑی خبر 

 واضح رہے کہ اس دوران حکومت کو اشیاء اور سروسز کی برآمدات سے مجموعی طور پر 19 ارب 41 کروڑ ڈالر حاصل ہوئے۔ پیٹرولیم مصنوعات اور دوسری درآمدات کا بل 42 ارب 63 کروڑ ڈالر تک پہنچ گیا۔ اس عرصے میں بیرون ملک مقیم پاکستانیوں نے 12 ارب 83 کروڑ 50 لاکھ ڈالر وطن بھجوائے۔ پچھلے برس اس عرصے کا خسارہ جی ڈی پی کے 3.6 فیصد تھا۔ رواں مالی سال 7 ماہ کی جی ڈی پی کا حجم 223 ارب 51 کروڑ 50 لاکھ ڈالر رہا۔