صرف ایک تصویر

مناظرعلی

صرف ایک تصویر


کہتے ہیں سیاست اچھی چیزنہیں،یہاں کرسی کی خاطر،وعدے،جھوٹ اورپگڑیاں اچھالنے کے علاوہ کوئی کام نہیں،سیاسی جلسوں کے بعداب یہ کام سوشل میڈیا پرہونے لگے ہیں اوردوسرے کی ایسی کی تیسی کرنے کیلئے اخلاقیات کی بھی دھجیاں اڑتی نظرآتی ہیں،جب یہ جنگ جلسوں سے نکل کرسوشل میڈیاپرآہی گئی ہے توپھراس میدان میں ہربندے کوبولنے کاحق ہے جومرضی ہے لکھو،جس کے بارے میں مرضی ہے لکھتے پھرو،حقیقت ہویافسانہ،ادب سے بات کرو یاگالی دو،نشانہ مرد ہویاعورت بولنے والے کوکیاخیال کرنے کی ضرورت ہے،ایسے لوگوں کے نزدیک فیس بک اورٹویٹرشاید بنایاہی اسی کام کیلئے گیاہے۔۔دکھ ہوتاہے اورمیں بھی اس برائی کیخلاف لکھنے کے سوا کچھ کرنے سے قاصر ہی ہوں۔۔میری کمزوری سجھیں یااپنی عزت بچانے کاحربہ۔۔

پاکستان کی اپوزیشن جماعتیں حکومت کیخلاف ایک پیج پرجمع ہوگئی ہیں اوران کاارادہ یہی ہے کہ کرسی پربیٹھے شخص کواٹھادیں یاکم ازکم ٹانگیں اتنی کھینچیں کہ کرسی والاخود ہی اٹھ جائے،بحرحال عید کے بعدپٹاری سے کون سا سانپ نکلتاہے یہ توانتظارکرناپڑے گامگرحکومت کیخلاف اکٹھ کرنے کی افتتاحی تقریب خوب زیربحث ہے،خاص طورپربلاول بھٹوزرداری اورمریم نوازکی ایک ساتھ تصویر نے توجیسے سیاسی مخالفین کو"آگ "لگادی ہو،سیاسی مخالفت اورناپسندیدگی کی انتہاکااظہارسوشل میڈیا پر"اننھے واہ"کیاجارہاہے،ایسے ایسے جملے اوراندازے لگائے جارہے ہیں کہ جنہیں یہاں لکھنامیرے نزدیک غیراخلاقی عمل ہے،سوشل میڈیااستعمال کرنے والے بخوبی جانتے ہیں اپنے سیاسی مخالفین پرکس قدرلفظوں کے تیربرسائے جارہے ہیں اوران تیروں کے زہرنے سوشل میڈیاپیجز پرخوب آگ لگارکھی ہے۔۔

میری نظرمیں بہترین سیاست دان وہ ہے جواپنی سیاست بھی خوب کرے مگرمخالفین پرتنقید کرتے وقت اخلاقیات کادامن بھی ہاتھ سے نہ چھوڑے،کسی کے نظریئے سے اختلاف ہوسکتاہے،سیاسی مخالفت میں بیان بازی معمول کی بات ہے مگراس قدرکیچڑاچھالناکسی طرح بھی مناسب عمل نہیں۔۔بلاول اورمریم کی تصویرہماری "وہیلی"عوام نے اس قدر سرچ کی،اتنے کمنٹس کیے،اتنے شیئرزاورجو کچھ منہ میں آیالکھتے گئے کہ وہ ٹاپ ٹرینڈبن گئی۔۔مجھے کسی پرکسی کی تنقیدسے اعتراض نہیں،مجھے ان الفاظ پراعتراض ہے کہ جس میں معترضین کسی ایک عورت پرتنقید نہیں کررہے بلکہ اس سے نہ صرف عورت ذات کی عزت پرحرف آرہاہےبلکہ اس سے تنقید کرنے والوں کی ذہنی پستی بھی کھل کرعیاں ہورہی ہے۔کسی کوکیاحق ہے کہ وہ ایک لڑکی،لڑکے یاایک مردواورعورت کوایک ساتھ بیٹھے دیکھ کرغیرمناسب کمنٹ کرے۔۔افسوسناک صورتحال یہ ہے کہ موٹرسائیکل /گاڑی پراکیلے جانے والے دومخالف جنس کے افرادکودیکھ کرغلط ہی گمان کیاجاتاہے یہ جانتے ہوئے کہ وہ دونوں بہن بھائی،ماں بیٹایاکسی اورمقدس رشتے سے منسلک ہوسکتے ہیں۔۔

حدیث نبوی کامفہوم ہے"اعمال کادارومدارنیتوں پرہے"۔۔۔۔حضوراکرمﷺ کی حدیث پرغورکرنے کی ضرورت ہے اوریہ بھی سبھی جانتے ہیں کہ نیت انسان کے دل میں ہوتی ہےا وراس کاعلم یاتوانسان کوخود ہوتاہے یاپھرخدا کی ذات کو،پھرکسی کی ظاہری حالت دیکھ کرہم کسی طرح خود سے اندازہ لگاسکتے ہیں کہ فلاں،فلاں ہے۔۔خدارا سیاسی مخالفت کے چکرمیں اپنے نامہ اعمال سیاہ مت کریں اوربخش دیں بچاری مریم کو اوردیکھاجائے توویسے بلاول بھٹو نے بھی کسی کا کیابگاڑاہے؟۔لوگوں کونجانے ہوکیاگیاہے،آپ بھی سوچیں ،میں بھی سوچتاہوں کہ صرف ایک تصویرسے اتنا طوفان؟۔۔حدہی ہوگئی ہے ویسے۔۔

بلاگر کاتعلق پنجاب کے ضلع حافظ آبادسے ہے اوروہ گزشتہ ڈیڑھ دہائی سے پرنٹ والیکٹرانک میڈیاسےمنسلک ہیں، آج کل سٹی نیوزنیٹ ورک میں خدمات سرانجام دے رہے ہیں اور24نیوزکیلئے مستقل بلاگ لکھتے ہیں، انہوں نے"کلیدصحافت"کے نام سے صحافت کے مبتدی طلباء کیلئے ایک کتاب بھی لکھی ہے۔