منی بجٹ: نان فائلر کو 1300 سی سی گاڑی، 50 لاکھ تک کی جائیداد خریدنے کی اجازت

منی بجٹ: نان فائلر کو 1300 سی سی گاڑی، 50 لاکھ تک کی جائیداد خریدنے کی اجازت


اسلام آباد(24نیوز) وزیر خزانہ اسد عمر نے کہا کہ یہ منی بجٹ نہیں،اصلاحاتی پیکج ہے،صنعتی ترقی کیلئے اصلاحات لارہےہیں،امیراورغریب میں فرق کم کریں گے، ایسی معیشت چاہتےہیں جس میں آئی ایم ایف کا آخری پروگرام ہو، سرمایہ کاری بڑھانےکیلئےاقدامات کریں گے، امیدہےاپوزیشن ہماری اصلاح کیلئےتجاویزدے گی، محصولات اوراخراجات میں فرق ختم کرناہوگا، 2023میں الیکشن خریدنے کی ضرورت نہیں پڑے گی،اسحاق ڈاربجٹ میں غلط اعدادوشمار پیش کرتے رہے ہیں۔  اس کے بعد اسد عمر نے منی بجٹ پیش کیا۔

موبائل فون کارڈ اور سیٹ پر ٹیکسز مزید بڑھا دئیے گئے

موبائل فون کارڈزاستعمال کرنے اور بیرون ملک سے پاکستان موبائل لانےوالوں کو حکومت نے زور دار جھٹکا دے دیا۔ وفاقی حکومت نے منی بجٹ میں ایک مرتبہ پھر موبائل فون کارڈز پر ٹیکس عائد کر دیا، اب صارفین کو موبائل فون کے کارڈز پر30 فیصد ٹیکس ادا کرنا ہوگا۔

دوسرا ترمیمی فنانس بل پیش کرتے ہوئے وزیر خزانہ اسد عمر نے کہا کہ درآمدی موبائل اور سیٹلائٹ پر سیلز ٹیکس کی شرح میں اضافہ کیا گیا ہے، بل کے مطابق 100سے 200 ڈالر مالیت کے موبائل فون پر500 روپے لیوی جب کہ 200سے350 ڈالر مالیت کے موبائل فون پر 1500 روپے لیوی عائد کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔اس طرح 350 سے500 ڈالر مالیت کے موبائل فون پر3500 روپے لیوی عائد کرنے کی سفارش کی گئی ہے، 500 ڈالر سے زائد مالیت کے موبائل فون پر 700 روپے لیوی عائد کرنے کی تجویز پیش کی گئی ہے۔

 متعدد اشیا اور سیکٹرز میں ٹیکس چھوٹ دینے اور کمی کا اعلان 

وفاقی وزیرخزانہ اسد عمر نے منی بجٹ پیش کرتے ہوئے اعلان کیا کہ متعدد اشیا اور سیکٹرز میں ٹیکس چھوٹ دینے اور کمی کا اعلان کردیا۔ اسد عمر نے اعلان کیا کہ سستے گھروں کی تعمیر کے لیے ٹیکس کم کرنے کی تجویزدی گئی ہے، منی بجٹ میں پلاسٹک کے آلات پر کسٹمز ڈیوٹی ختم کرنے اور ڈائپرز پر کسٹمز ڈیوٹی پانچ فیصد کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔

بجٹ میں شیر خوار بچوں کے دودھ پر پانچ فیصد کسٹمز ڈیوٹی عائد کرنے کی سفارش اور سیرامکس مصنوعات پر کسٹمز ڈیوٹی تین فیصد کردی گئی۔   منی بجٹ میں درجنوں میڈیکل آلات پر کسٹمز ڈیوٹی ختم کردی گئی ہے، ڈائلسیسز مشین اور آلات پر کسٹمز ڈیوٹی ختم جبکہ لیپرو اسکوپی کے آلات اور مشینوں پر کسٹمز ڈیوٹی ختم کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔

متعدد صنعتی خام مال کی درآمد پر کسٹمز ڈیوٹی ختم کرنے اور نیوز پرنٹ پر کسٹمز ڈیوٹی ختم کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔بجٹ میں چھوٹے شادی ہالوں پر ود ہولڈنگ ٹیکس کم کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔بجٹ میں اسٹاک ایکسچینج ممبران پر ایڈوانس انکم ٹیکس ختم جبکہ متبادل توانائی مشینری بنانے کی سرمایہ کاری کے لئے پانچ سال تک ٹیکس سے استثنی دینے کا اعلان کیاگیا ہے۔ بجٹ میں نان بینکنگ کمپنیوں کا سپر ٹیکس ختم کرنے جبکہ کارپوریٹ اِنکم ٹیکس پر ایک فی صد سالانہ کمی برقرار رہے گی۔

وفاقی حکومت نے اسپیشل معاشی زونز میں آنے والی تمام مشینری جو ٹیکس استثنی دینے کا اعلان کردیا ہے،فائلرز کے لیے بینکوں سے کیش نکلوانے پر ایڈوانس انکم ٹیکس ختم کرنے اور فائلرز کے لیے بینکنگ انسٹرومنٹس کی خریداری پر ایڈوانس انکم ٹیکس ختم کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔

نان فائلرز کیلئے اچھی خبر

وزیر خزانہ نے کہا کہ نان فائلر پر 1300 سی سی تک گاڑیاں خریدنے کی بندش ختم کررہے ہیں، نان فائلر چھوٹی اور درمیانے سائز کی گاڑی لے سکتا ہے، ہم انہیں فائلر بنانا چاہتے ہیں، اس پر ٹیکس بڑھا رہے ہیں۔اس کے علاوہ انھوں نے کہا کہ اب نان فائلرز50لاکھ روپےتک کی جائیدادخریدسکیں گے۔

نان بینکنگ کمپنیوں کا سپر ختم

حکومت نے نان بینکنگ کمپنیوں کا سپر ختم کرنے اور بینکنگ کمپنیوں پر چار فیصد سپر ٹیکس برقرار رکھنے کا اعلان کیا ہے۔

قرضہ حسنہ اسکیم

حکومت نے غریبوں کے گھر بنانے کیلیے پانچ ارب روپے قرض حسنہ کی اسیکم لانے کا بھی اعلان کردیا۔ اسد عمر نے قرضہ حسنہ سکیم کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں غریبوں کے لیے گھر بنانے ہیں، وزیراعظم کا وعدہ ہے50 لاکھ گھر بنانے کی کوشش کریں گے، اس کے لیے دو کام کیے جارہے ہیں، بینک چھوٹے گھروں کے لیے جو قرض دیں گے اس پر ٹیکس 39 سے کم کرکے 20 فیصد کررہے ہیں، 5 ارب روپے کی قرضِ حسنہ کی اسکیم لارہے ہیں، ریوالونگ فنڈ پیدا کررہے ہیں، جو لوگ کم آمدنی کے لوگوں کے گھر بنانے پر کام کرتے ہیں انہیں قرض دیں گے تاکہ وہ غریبوں کے لیے گھر بناسکیں۔

چھوٹے شادی ہالوں کیلئے خوشخبری

حکومت نے چھوٹی شادی ہالوں کیلئے خوشخبری سنادی، چھوٹےشادی ہالوں پرٹیکس کم کرکے5ہزارکرنےکااعلان کردیا ہے۔

بڑی گاڑیوں پر ٹیکس شرح بڑھانے کا اعلان

حکومت نے نان فائلرز کے لیے گاڑیوں کی خریداری، رجسٹریشن اور بکنگ پر ایڈوانس انکم ٹیکس بڑھانے کی تجویزدے دی،  ٹیکس ریٹرنز فائل نہ کرنے والے افراد زیادہ ٹیکس دے کر 1300 سی سی تک گاڑی خرید سکیں گے،حکومت نے کن کن شعبوں میں ٹیکسز بڑھا دیے جائیں۔

حکومت نے 1300 لے کر 1800سی سی تک اور اس سے بڑی گاڑیوں پر ٹیکس کی شرح بڑھانے کا اعلان کردیا،بجٹ پیش کرتے ہوئے اسد عمر نے اعلان کیا کہ ٹیکس ریٹرنز فائل نہ کرنے والے افراد زیادہ ٹیکس دے کر 1300 سی سی تک گاڑی خرید سکیں گے، 1800سی سی سے زائد کی گاڑی پر 10 فیصد ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کردی گئی ہے۔

نان فائلرز کے لیے گاڑیوں کی خریداری، رجسٹریشن اور بکنگ پر ایڈوانس انکم ٹیکس بڑھانے کی تجویز دی گئی ہے۔ وزیر خزانہ نے کہاکہ تاجر ہم سے مطالبہ کرتے رہے ہیں ہم ٹیکس دینے کو تیار ہیں لیکن ہمارے لیے آسان پیدا کریں، ا ان کے لیے آسان اسکیم لارہے ہیں جسے اسلام آباد سے شروع کررہے ہیں، اس کی کامیابی کے بعد اسے پورے ملک میں لائیں گے، تاجروں کی یہ خواہش پوری کریں گے اس کے نتیجے میں پہلے کی نسبت زیادہ ٹیکس ملےگا۔

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔