بھارت ،پاکستان کی حقیقت کو تسلیم کرئے، امن کی خواہش ہماری کمزوری نہ سمجھیں: صدر مملکت



اسلام آباد (24نیوز) یوم پاکستان پریڈکاسلوگن پاکستان زندہ باد سے گونج اُٹھا، اسلام آباد پریڈگراؤنڈ میں یوم پاکستان کی مرکزی تقریب جاری ہے، تینوں مسلح افواج اور سکیورٹی فورسز کے دستوں کی جانب سےمارچ پاسٹ کا شاندار مظاہرہ کیا گیاجبکہ صدرمملکت اور وزیراعظم نےمشترکہ پریڈ سے خطاب بھی کیا۔ 

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد کے پریڈ گراؤنڈ میں مسلح افواج کی شاندار   پریڈ جاری ہے جس میں چین، سعودی عرب اور آذربائیجان کے دستے اور ہواز باز بھی شریک ہیں، چینی اورترک لڑاکاطیاروں اور آذربائیجان اورسعودی فوجی دستے بھی شریک ہوئے، ملائیشیا کےوزیراعظم مہاتیرمحمد تقریب کے مہمان خصوصی ہیں،صدرِ مملکت سمیت مہمانِ خصوصی کی آمد کے بعد گراؤنڈ میں قومی ترانا پڑھا گیا اور تلاوتِ کلامی پاک کی گئی،جس کے بعد صدرِ مملکت عارف علوی کو مسلح افواج کے دستوں سے سلامی پیش کی اور صدر نے مسلح افواج کی پریڈ کا معائنہ کیا،اس کے علاوہ حکومتی شخصیات، غیر ملکی سفارتکار اور اعلیٰ سول و عسکری حکام سمیت زندگی کے مختلف شعبہ جات سے تعلق رکھنے والی شخصیات تقریب میں شریک ہیں۔

صدرمملکت عارف علوی

یوم پاکستان پر صدرمملکت عارف علوی نےمشترکہ پریڈ سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ پوری قوم کو یوم پاکستان مبارک ہو، آزادی کا حصول قربانی کامتقاضی ہوتا ہے پاکستان آج ابھرتی ہوئی معاشی قوت ہے،دہشت گردی کے خلاف جنگ میں جانی ومالی قربانیاں دیں، پاکستان نے دہشت گردی کے خلاف مثالی کامیابی حاصل کی،دہشت گردی دنیا کے امن کے لیے سب سے بڑا خطرہ ہے،ہم پرامن قوم ہیں اپنے دفاع سے ہرگزغافل نہیں اور تمام ممالک کی خودمختاری کا احترام کرتے ہیں،جنگ کی بجائے امن کی ضروت، اصل جنگ غربت اور افلاس کے خؒلاف ہے،لڑائی پر یقین نہیں رکھتے،پوری قوم کی دعائیں ہمارے ساتھ ہیں، آج کی پریڈ یہ پیغام دے رہی ہے کہ ہم پرامن ہیں۔

صدرمملکت کاکہناتھاکہ بھارت نےدھمکی آمیز بیانات سے جنگی فضا قائم کی اور عالمی قوانین کو پامال کیا،پلوامہ حملےکےبعد بھارت نے بغیرثبوت کےپاکستان پرالزامات عائدکیے جس پردشمن کومنہ توڑجواب دیا بھارتی جارحیت کا جواب دینا ہمارا فرض تھا،دہشتگروں کے عزائم کامیاب نہیں ہونے دنگے، پاکستان کو دہشتگردی کے چیلنجز کا سامنا ہے، پاکستان ایک حقیقت ہے جسے دنیا تسلیم کرچکی ہے اور بھارت کو بھی تسلیم کرلینا چاہیے، اللہ تعالیٰ کا شکر ہے کہ اس نے ہمیں آزادی جیسی نعمت عطاکی، پاکستان ایک ایٹمی ملک ہے اور پرامن بقائے کو فروغ دیتا ہے،جمہوری ملک ہونےکےناطےپاکستان مذاکرات پریقین رکھتاہے۔

صدرمملکت عارف علوی کا اپنے خطاب میں مزید کہناتھاکہ امن کی خواہش کوہماری کمزوری نہ سمجھا جائے،دہشت گردی کے خلاف جنگ میں جانی ومالی قربانیاں دیں،افغانستان کے عوام طویل جنگ سے نجات چایتے ہیں پاکستان اس سلسلے میں اہم کردار ادا کررہا ہے، ترقی یافتہ پاکستان شہداء اور غازیوں کی وجہ سے بہترین ہے، اپنے خطاب میں صدر عارف علوی نے پاک فوج زندہ باد، پاکستان پائندہ باد کا نعرہ بھی لگایا۔

وزیراعظم عمران خان

وزیراعظم عمران خان کے پریڈ گراؤنڈ اسلام آباد پہنچے پر تمام مہمانوں نے اُٹھ کر تالیاں بجائیں اور ان کو خوش آمدید کہا۔

ضرور پڑھیں:ڈالر سستا ہوگیا

یوم پاکستان کی مرکزی تقریب کے موقع پر پاک بحریہ اورپاک فضائیہ کے طیاروں کا شاندار فلائی پاسٹ کا مظاہرہ کیا، ائیرچیف مارشل مجاہد انور خان نے قیادت کی، طیاروں کی گھن گرج سے فضا گونج اٹھی،جبکہ اونٹوں پر سوارپاکستان رینجرزکے خوبصورت دستے نے مارچ پاسٹ کیا، مہمانوں کو سلامی دی، دستے نے جیوے جیوے پاکستان کی دھنیں بجائیں۔

پاکستان آرمڈکورکے دستوں میں انفنٹری،آرٹلری اور انجینئیرنگ کور نےشاندار مارچ ماسٹ کیا،الضرار،البدر ٹینک نے سلامی دی اور توپخانے کے دستے نے بھی مارچ کیا۔

ایئرڈیفنس اور جدید ٹیکنالوجی سے لیس دستوں نے بھی پریڈ کےشرکا کو سلامی دی، جوانوں کے’نعرہ تکبیر‘ اور ’پاکستان زندہ باد‘ کے فلک شگاف نعروں سے فضاء گونج اُٹھی۔

یوم پاکستان کے موقع پر  ڈی جی آئی ایس پی آر نے ٹویٹ  کرتے ہوئےخصوصی تعاون پر میڈیا کا شکریہ ادا کیا۔

قبل ازیں وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں دن کا آغاز 31 توپوں کی سلامی سے کیا جائے گا،جوانوں نے نعرہ تکبیر،اللہ اکبر اور پاکستان زندہ باد کے نعرے لگائے،ہم زندہ قوم ہیں پائندہ قوم ہیں،پشاور میں دن کے آغازپر21 توپوں کی سلامی اور لاہور میں بھی21 توپوں کی سلامی سے دن کا آغاز  کیا گیا،محفوظ شہید گریثرن میں نماز فجر کے پروقار تقریب کا اہتمام کیا گیا،پاک فوج کے چاک و چوبند دستےنے21توپوں کی سلامی پیش کی،جوانوں کے نعرہ تکبیر،اللہ اکبر اور پاکستان زندہ باد کے نعرے بھی لگائے۔

واضح رہے کہ23 مارچ، 1940ء کو لاہور کے منٹو پارک میں آل انڈیا مسلم لیگ کے تین روزہ سالانہ اجلاس کے اختتام پر وہ تاریخی قرارداد منظور کی گئی تھی جس کی بنیاد پر مسلم لیگ نے برصغیر میں مسلمانوں کے لیے علیحدہ وطن کے حصول کے لیے تحریک شروع کی اور سات برس کے بعد اپنا مطالبہ منظور کرانے میں کامیاب رہی۔