جاپان نے ٹیکنالوجی کے بعدایک اورسنگ میل طے کرلیا

جاپان نے ٹیکنالوجی کے بعدایک اورسنگ میل طے کرلیا


ٹوکیو(24نیوز)  جاپان نے الیکٹرانک اورٹیکنالوجی کے بعدایک اورسنگ میل طے کرلیا، جاپان میں پہلی خاتون فائٹرپائلٹ کاتقررکردیاگیا۔
چھبیس سال کی مالٹسو سشیمانے 2014 میں نیشنل ڈیفنس اکیڈمی سے گریجویشن مکمل کرنے کے بعد ائیر سیلف ڈیفینس فورس میں شمولیت اختیار کی۔ایک ہفتے تربیت مکمل کرنے کے بعد انہیں ایک تقریب میں فائٹر پائلٹ کے طور پر فورس میں شامل کرلیا گیا۔ان کا کہنا ہے کہ جب میں اسکول میں پرائمری میں زیر تعلیم تھی تومیں نے فلم ’ ٹاپ گن‘ دیکھی اور اس وقت ہی فائٹر پائلٹ بننے کا فیصلہ کر لیا تھا۔ 
جاپان بھر میں، خواتین کو طویل عرصے سے گھریلو فرائض اور انتظامی کردار ادا کرتی نظر آتی رہی ہیں، 2013 میں ان کو با اختیار بنانے کا فیصلہ کیا گیا تھا۔خواتین تمام شعبوں میں با اختیار ہوتی گئیں اور اب انہیں فوج میں بھی کام کرنے کا اختیار حاصل ہو گیا۔

وقار نیازی

سٹاف ممبر، یونیورسٹی آف لاہور سے جرنلزم میں گریجوایٹ، صحافی اور لکھاری ہیں۔۔۔۔