سپریم کورٹ نے 24 منرل واٹر کمپنیوں کے پانی کی فروخت پر پابندی لگا دی


اسلام آباد(24نیوز) سپریم کورٹ نے 24 منرل واٹر کمپنیوں کے پانی کی فروخت پر پابندی لگا دی،،چیف جسٹس نے کہا ہے کہ جب تک صاف پانی کی تسلی نہ ہو فروخت کی اجازت نہیں دینگے۔
تفصیلات کے مطابق پینے کے صاف پانی کیس کی سماعت چیف جسٹس سپریم کورٹ نے کی انہوں نے 24 منرل واٹر کمپنیوں کے پانی کی فروخت پر پابندی لگا دی۔
چیف جسٹس ثاقب نثار کا اپنے ریمارکس میں کہناتھا کہ جب تک صاف پانی کی تسلی نہ ہو فروخت کی اجازت نہیں دینگے،قومی اور بچوں کے مفاد کو دیکھنا ہے،کمپنی کے وکیل بڑی فیس لیتے ہیں،بڑی فیس لیکر ریلیف لینا ان کا حق نہیں۔
ان کا مزید کہنا تھا کہ کمپنیوں کو ادراک ہونا چاہیے گندہ پانی فروخت نہیں کرنا،بڑی کمپنیاں ہیں لیکن پانی صاف نہیں،قوم کے بچوں کا خیال رکھنا ہے،عدالت کی تسلی تک پانی فروخت کی اجازت نہیں۔
وکیل کمپنی منرل واٹرنے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ پی سی ایس کیو اے کی رپورٹ منگوا لیں ۔جواب میں چیف جسٹس نے کہا ہے کہ ہم رپورٹ منگوا لیں گے،کمپنی اس زعم میں نہ رہے بڑا وکیل کرنے سے ریلیف مل جائے گا۔چیف جسٹس نے کیس کی سماعت غیر معینہ مدت کے لیے ملتوی کردی ہے۔