سرکاری ہیلی کاپٹرصرف وزیراعلیٰ کےلیےنہیں ہوتا: چیف جسٹس


لاہور(24نیوز) چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار نے چھٹی کے روزبھی عدالت لگالی۔ فریادیوں کو اپنے چیمبر میں بلاکر فریادیں سنی۔ انسانی حقوق اور اقلیتوں کی شکایات کےلیے سیل بنانےکاحکم بھی دے دیا۔

چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار نے چھٹی کے روزبھی عدالت لگالی۔ چیف جسٹس نے سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں مختلف کیسز کی سماعت کی۔ میڈیکل کالجز کےحوالے سے لئے گئے ازخود نوٹس کیس کی سماعت میں چیف جسٹس نے 3 ماہ میں ریڈکریسنٹ میڈیکل کالج کی حالت زاربہتربنانے کاحکم دے دیا۔ انھوں نے کہا کہ ہم نے ملک میں اطائی نہیں، ڈاکٹر بنانے ہیں۔ چیف جسٹس نے سرگودھا میں میڈیکل کالج کی انسپکشن کے لیےہیلی کاپٹرکا بندوبست کرنے کا بھی حکم دیا۔ چیف جسٹس بذریعہ ہیلی کاپٹرسرگودھا گئے اورمیڈیکل کالج کی انسپکشن کی،ہیلی کاپٹر کے استعمال پرانھوں نے کہاکہ سرکاری ہیلی کاپٹرصرف وزیراعلیٰ کےلیےنہیں ہوتا۔

یہ بھی پڑھیں: بطور چیف جسٹس مطلق العنان نہیں :جسٹس ثاقب نثار 

چیف جسٹس نے سیالکوٹ کے نوجوان کو لاہور میں مبینہ پولیس مقابلے میں مارنے کااز خودنوٹس لیتے ہوئے ایڈیشنل آئی جی ابوبکرخدابخش کو تحقیقات کا حکم دے دیا۔آئی جی پنجاب، ایڈیشنل آئی جی اور پولیس مقابلے میں حصہ لینے والے اہلکاروں کو7اپریل کوطلب کرلیا۔

چیف جسٹس ثاقب نثار نے چونیاں میں مبینہ پولیس مقابلےمیں نوجوان کی ہلاکت کی جوڈیشل انکوائری کا حکم دے دیا۔ سیشن جج قصور کو تحقیقات کرکے سات اپریل کو رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت بھی کردی۔

اہم خبر: آسٹریلوی کرکٹ ٹیم بڑے تنازع میں پھنس گئی 

چیف جسٹس آف پاکستان نے فریادیوں کو اپنے چیمبر میں بلاکر ان کی فریادیں سنی اور انسانی حقوق اور اقلیتوں کی شکایات کےلیے سیل بنانےکاحکم دے دیا۔